Likha nehi By John Elia - سوچا ہے لکھا نئیں


یہاں معنی کا بے صورت صِلا نئیں 


Likha nehi By John Elia -  سوچا ہے لکھا نئیں



عجب کچھ میں نے سوچا ہے لکھا نئیں 



ہیں سب اک دوسرے کی جستجو میں 

مگر کوئی کسی کو بھی ملا نئیں 

ہمارا ایک ہی تو مدعا تھا 

ہمارا اور کوئی مدعا نئیں 

کبھی خود سے مُکر جانے میں کیا ہے 

میں دستاویز پر لکھا ہوا نئیں 

یہی سب کچھ تھا جس دم وہ یہاں تھا 

چلے جانے پہ اس کے جانے کیا نئیں 

بچھڑ کے جان تیرے آستاں سے 

لگایا جی بہت لیکن لگا نئیں 

جدائی اپنی بے روداد سی تھے 

کہ میں رویا نہ تھا اور پھر ہنسا نئیں 

وہ ہجر و وصل تھا سب خواب در خواب 

وہ سارا ماجرا جو تھا وہ تھا نئیں 

بڑا بے آسرا پن ہے سو چُپ رہ 

نہیں ہے یہ کوئی مژدہ خدا نئیں

Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


yahan maienay ka be soorat sla nyin



ajab kuch mein ne socha hai likha nyin





hain sab ik dosray ki justojoo mein



magar koi kisi ko bhi mila nyin



hamara aik hi to mudda tha



hamara aur koi mudda nyin



kabhi khud se mukar jaany mein kya hai



mein dastaweez par likha sun-hwa nyin



yahi sab kuch tha jis dam woh yahan tha



chalay jaany pay is ke jaany kya nyin



bhichar ke jaan tairay aastaan se



lagaya jee bohat lekin laga nyin



judai apni be rudaad si they



ke mein roya nah tha aur phir hasa nyin



woh hijar o wasal tha sab khawab Dur khawab



woh sara maajra jo tha woh tha nyin



bara be aasra pan hai so chup reh



nahi hai yeh koi Musda kkhuda nyin

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se