Manao Main By John Elia - مناؤں میں


تجھ سے گلے کروں تجھے جاناں مناؤں میں 


Manao Main By John Elia -  مناؤں میں



اک بار اپنے آپ میں آؤں تو آؤں میں 

دل سے ستم کی بے سروکاری ہوا کو ہے 

وہ گرد اڑ رہی ہے کہ خود کو گنواؤں میں 

وہ نام ہوں کہ جس پہ ندامت بھی اب نہیں 

وہ کام ہیں کہ اپنی جدائی کماؤں میں 

کیونکہ ہو اپنے خواب کی آنکھوں میں واپسی 

کس طور اپنے دل کے زمانوں میں جاؤں میں 

اک رنگ سی کمان ہو خوشبو سا ایک تیر 

مرہم سی واردات ہو اور زخم کھاؤں میں 

شکوہ سا اک دریچہ ہو نشہ سا اک سکوت 

ہو شام اک شراب سی اور لڑکھڑاؤں میں 

پھر اس گلی سے اپنا گزر چاہتا ہے دل 

اب اس گلی کو کون سی بستی سے لاؤں میں
Check this out


tujh se gilaay karoon tujhy janaan مناؤں mein

ik baar –apne aap mein آؤں to آؤں mein

dil se sitam ki be سروکاری sun-hwa ko hai

woh gird urr rahi hai ke khud ko گنواؤں mein

woh naam hon ke jis pay nedamat bhi ab nahi

woh kaam hain ke apni judai کماؤں mein

kyunkay ho –apne khawab ki aankhon mein wapsi

kis tor –apne dil ke zamanoon mein جاؤں mein

ik rang si kamaan ho khusbhoo sa aik teer

marham si waardaat ho aur zakham کھاؤں mein

shikwah sa ik dareecha ho nasha sa ik sukut

ho shaam ik sharaab si aur لڑکھڑاؤں mein

phir is gali se apna guzar chahta hai dil

ab is gali ko kon si bastii se لاؤں mein

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se