Na Raho By John Elia - کسی سے عہد و پیماں کر نہ رہیو


کسی سے عہد و پیماں کر نہ رہیو 
Na Raho By John Elia - کسی سے عہد و پیماں کر نہ رہیو

تُو اس بستی میں رہیو پر نہ رہیو 

سفر کرنا ہے آخر دو پلک بیچ 

سفر لمبا ہے بے بستر نہ رہیو 

ہر اک حالت کے بیری ہیں یہ لمحے 

کسی غم کے بھروسے پر نہ رہیو 

سہولت سے گزر جاؤ مری جاں 

کہیں جینے کی خاطر مر نہ رہیو 

ہمارا عمر بھر کا ساتھ ٹھیرا 

سو میرے ساتھ تُو دن بھر نہ رہیو 

بہت دشوار ہو جائے گا جینا 

یہاں تُو ذات کے اندر نہ رہیو 

سویرے ہی سے گھر آجائیو آج 

ہے روزِ واقعہ باہر نہ رہیو 

کہیں چھپ جاؤ تہ خانوں میں جا کر 

شبِ فتنہ ہے اپنے گھر نہ رہیو 

نظر پر بار ہو جاتے ہیں منظر 

جہاں رہیو وہاں اکثر نہ رہیو


Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


in urdu roman

zair-e maharab ابرواں khoo hai



از zamee taa bah aasmaa khoo hai





aik bsml ka Raqs rang tha aaj



sar-e maqtal jahan تہاں khoo hai



zakham ke خرمنوں ka Musda ho



aabِ kasht bulaa kushaan khoo hai



saada پوشان aydِ shoq, Naveed



aabِ hoz numaaziaan khoo hai



baab hai hasratoon ki mehnat gaah



dil yaranh khoo fishan khoo hai



zakham angaiz hai kharaash umeed



hai didarِ Gul رخاں khoo hai



ho gaye باریاب ahal gharz



roye dehleez o aasmaa khoo hai



dil khonin hai mizban



umdah khawan maizban khoo hai



fasal aayi hai rang مستوں ki



tab_h diwarِ gulisitan khoo hai



har tamashaayi mudai thehra



par to zakham khoo chuka khoo hai



mein hon be daagh دامناں mohtaat



nafs khoo گرفتگاں khoo hai



Ghuncha ha zakham, zakham ha almaas



shabnam baagh imteha khoo hai



is taraf kohkn idhar sheree



aur dono ke darmiyan khoo hai



be dilon ko nah چھیڑیو ke yeh qoum




amtِ shoq raaygan khoo hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se