Naam Hi kiya by John Elia - نام ہی کیا نشاں ہی


نام ہی کیا نشاں ہی کیا خواب و خیال ہو گئے 


Naam Hi kiya by John Elia - نام ہی کیا نشاں ہی



تیری مثال دے کے ہم تیری مثال ہو گئے 

سایہ ذات سے بھی رم، عکس صفات سے بھی رم 

دشتِ غزل میں آ کے دیکھ ہم تو غزال ہو گئے 

کتنے ہی نشہ ہائے ذوق، کتنے ہی جذبہ ہائے شوق 

رسمِ تپاکِ یار سے رو بہ زوال ہو گئے 

عشق ہے اپنا پائیدار، اس کی وفا ہے استوار 

ہم تو ہلاک۔ ورزشِ فرض۔ محال ہو گئے 

کیسے زمیں پرست تھے عہدِ وفا کے پاس دار 

اڑ کے بلندیوں میں ہم، گرد ملال ہو گئے 

قربِ جمال اور ہم، عیش و وصال اور ہم؟ 

ہاں یہ ہوا کہ ساکنِ شہرِ جمال ہو گئے 

جادو شوق میں پڑا قحطِ غبارِ کارواں 

واں کے شجر تو سر بہ سر دست سوال ہو گئے 

کون سا قافلہ ہے یہ، جس کے جرس کا ہے یہ شور 

میں تو نڈھال ہو گیا، ہم تو نڈھال ہو گئے 

خار بہ خار گل بہ گل، فصلِ بہار آ گئی 

فصلِ بہار آ گئی۔ زخم بحال ہو گئے 

شور اٹھا مگر تجھے لذت گوش تو ملی 

خون بہا مگر ترے ہاتھ تو لال ہو گئے 

ہم نفسانِ وضع دار، مستعانِ بردبار 

ہم تو تمہارے واسطے ایک وبال ہو گئے 

جون کرو گے کب تلک اپنا مثالیہ تلاش 

اب کئی ہجر ہو چکے، اب کئی سال ہو گئے

Check this out


naam hi kya nshan hi kya khawab o khayaal ho gay



teri misaal day ke hum teri misaal ho gay



saya zaat se bhi rim, aks sifaat se bhi rim



dast-e ghazal mein aa ke dekh hum to Ghazaal ho gay



kitney hi nasha haae zouq, kitney hi jazba haae shoq



rasm-e tapaak yaar se ro bah zawaal ho gay



ishhq hai apna paidaar, is ki wafa hai ustuwar



hum to halaak. werzish farz. mahaal ho gay



kaisay zamee parast they ahdِ wafa ke paas daar



urr ke bulandiyon mein hum, gird malaal ho gay



qrbِ jamal aur hum, aish o visale aur hum ?



haan yeh sun-hwa ke saknِ shehr-e jamal ho gay



jaadoo shoq mein para qeht gubhar karvan



wahn ke shajar to sir bah sir dast sawal ho gay



kon sa qaafla hai yeh, jis ke Jarass ka hai yeh shore



mein to nidhaal ho gaya, hum to nidhaal ho gay



khaar bah khaar Gul bah Gul , fasal bahhar aa gayi



fasal bahhar aa gayi. zakham bahaal ho gay



shore utha magar tujhay lazzat gosh to mili



khoon baha magar tre haath to laal ho gay



hum نفسان waza daar, مستعان Burdbar



hum to tumahray wastay aik wabaal ho gay



June karo ge kab talak apna masaliya talaash



ab kayi hijar ho chuke, ab kayi saal ho gay

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se