Ruksar By John Elia - رخسار سرخ ہیں


کہنا ہی کیا کہ شوخ کے رخسار سرخ ہیں 


Ruksar By John Elia -  رخسار سرخ ہیں



جب حرف شوخ سے لب گفتار سرخ ہیں 



ناداری نگاہ ہے اور زرد منظری 


حسرت یہ رنگ کی ہے جو نادار سرخ ہیں 

اب اس متاع رنگ کا اندازہ کیجیے 

شوق طلب سے جس کے خریدار سرخ ہیں 

ہے بندوبست لطف مغاں، رنگ کھیلیے 

میخانہ سرخ ہے مے و میخوار سرخ ہیں 

جا بھی فقیہ سبز قدم ، اب یہاں سے جا 

میں تیری بات پی گیا پر یار سرخ ہیں 

طغیان رنگ دیکھیے اس لالہ رنگ کا 

پیش از ورود ، کوچہ و بازار سرخ ہیں 

بسمل ہیں جوش مستی حالت میں سینہ کوب 

وہ رقص میں ہے اور در و دیوار سرخ ہیں

Check this out



kehna hi kya ke shokh ke rukhsaar surkh hain



jab harf shokh se lab guftaar surkh hain





nadari nigah hai aur zard mnzri




hasrat yeh rang ki hai jo nadaar surkh hain



ab is Mataa rang ka andaza kiijiye



shoq talabb se jis ke khredar surkh hain



hai bandobast lutaf maghaan, rang khelee 



mekhana surkh hai me o mai-khwaar surkh hain



ja bhi fiqiya sabz qadam, ab yahan se ja



mein teri baat pi gaya par yaar surkh hain



tagiyaan rang dekhieye is Lala rang ka



paish is Warood , koocha o bazaar surkh hain



bismal hain josh masti haalat mein seenah kob



woh raqs mein hai aur Dur o deewar surkh hain

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

 Kaha Hain Janey By Jaun Elia