Thi Woh Aik By Jaun Elia- تھی جو وہ اک


تھی جو وہ اک تمثیلِ ماضی آخری منظر اس کا یہ تھا 
Thi Woh Aik By Jaun Elia- تھی جو وہ اک

پہلے اک سایہ سا نکل کے گھر سے باہر آتا ہے 



اس کے بعد کئی سائے سے اس کو رخصت کرتے ہیں 


پھر دیواریں ڈھے جاتی ہیں دروازہ گر جاتا ہے

Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


thi jo woh ik Tamseel maazi aakhri manzar is ka yeh tha


pehlay ik saya sa nikal ke ghar se bahar aata hai





is ke baad kayi saaye se is ko rukhsat karte hain






phir dewarain dhe jati hain darwaaza gir jata hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se