Top Ten Judai Shayari 4 U


بس یونہی چھوڑ دیا اس نے مجھے 

ہائےاس نے مجھے آزمایا بھی نہیں 
bus yohi chor diya us ney majhey
haye es ney majhey azmay bhi nehi



Top Ten Judai Shayari 4 U 
Top Ten Judai Shayari 4 U


---------------------------------------------- 


جو زندگی بچی ہے اسے مت گنوائیے 


بہتر یہی ہے آپ مجھے بھول جائیے 

jo zindagi bachi hai usey mat gawaye
behtar yehi hai app majhey bhool jaye

---------------------------------------------- 


اس کی دوری نے چھین لی ہنسی مجھ سے 

اور لوگ کہتے ہیں بہت سدھر گیا ہوں میں 
us ki doori ney cheen li hasi majh sey
aur log kahtey hai bohat sudhar gaya ho main


---------------------------------------------- 


کیسے ہوتے ہیں بچھڑنے والے 

ہم یہ سوچیں بھی تو ڈر جاتے ہیں 
kaisey hotey hai bichtarney waley
hum yeh sochein bhi toh dar jatey hai

---------------------------------------------- 


قبول جرم کرتے ہیں صاحب تیرے قدموں میں گر کر 

سزاۓ موت ہے منظور پر صاحب تیری جداٸی نہیں 

qabool e jurm  kartey hai sahab tere qadmo mein gir kar
sazaye mout hai manzor sahab teri judai mein


---------------------------------------------- 

صرف تصویر ............ رہ گئی باقی 

جس میں ہم ساتھ ساتھ بیٹھے تھے 

sirf tasveer rah gayi baki
jis mein hum saath saath baithey they
---------------------------------------------- 
چھوڑنے میں نہیں جاتا اسے دروازے تک 
لوٹ آتا ہوں کہ اب کون اسے جاتا دیکھے 

chorney main nehi jata usey darwazey tak
lot ata ho k ab kon usey jata dhekey
---------------------------------------------- 
یقین تھا کہ کوئی سانحہ گزرنا ہے 

گمان نہ تھا کہ تیرا ساتھ چھوٹ جائے گا 

yaqeen tha k kio saaniha guzarna hai
guman na tha k tera saath chout jaye ga

---------------------------------------------- 

وہ ہے جان اب ہر ایک محفل کی 

ہم بھی اب گھر سے کم نکلتے ہیں 
woh hai jaan ab har aik mehfil ki
hum bhi ab gher sey kam nikaltey hai

---------------------------------------------- 

بد گمانی بڑھا کر تم نے یہ کیا کر دیا 

خود بھی تنہا ہو گئے مجھ کو بھی تنہا کر دیا 
badgumani barha kar tumney yeh kiya kar diya
khud bhi tanha ho gaye mjh ko bhi tanha kar diya


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se