Zah R Mehrab By Jaun Elia - زیرِ محراب


زیرِ محراب ابرواں خوں ہے 


Zah R Mehrab By Jaun Elia - زیرِ محراب



از زمیں تا بہ آسماں خوں ہے 


ایک بسمل کا رقصِ رنگ تھا آج 

سرِ مقتل جہاں تہاں خوں ہے 

زخم کے خرمنوں کا مژدہ ہو 

آبِ کشت بلا کشاں خوں ہے 

سادہ پوشانِ عیدِ شوق، نوید 

آبِ حوض نمازیاں خوں ہے 

باب ہے حسرتوں کی محنت گاہ 

دل یارانہ خوں فشاں خوں ہے 

زخم انگیز ہے خراشِ امید 

ہے دیدارِ گل رخاں خوں ہے 

ہو گئے باریاب اہل غرض 

روئے دہلیز و آسماں خوں ہے 

دل خونیں ہے میزباں 

عمدہ خوانِ میزبان خوں ہے 

فصل آئی ہے رنگِ مستوں کی 

تابہ دیوارِ گلستاں خوں ہے 

ہر تماشائی مدعی ٹھہرا 

پر تو زخمِ خوں چکا خوں ہے 

میں ہوں بے داغ دامناں محتاط 

نفسِ خوں گرفتگاں خوں ہے 

غنچہ ہا زخم، زخم ہا الماس 

شبنم باغ امتحاں خوں ہے 

اس طرف کوہکن ادھر شیریں 

اور دونوں کے درمیاں خوں ہے 

بے دلوں کو نہ چھیڑیو کہ یہ قوم 

امتِ شوق رائیگاں خوں ہے

Check this out




zair-e maharab ابرواں khoo hai



از zamee taa bah aasmaa khoo hai





aik bsml ka Raqs rang tha aaj



sar-e maqtal jahan تہاں khoo hai



zakham ke خرمنوں ka Musda ho



aabِ kasht bulaa kushaan khoo hai



saada پوشان aydِ shoq, Naveed



aabِ hoz numaaziaan khoo hai



baab hai hasratoon ki mehnat gaah



dil yaranh khoo fishan khoo hai



zakham angaiz hai kharaash umeed



hai didarِ Gul رخاں khoo hai



ho gaye باریاب ahal gharz



roye dehleez o aasmaa khoo hai



dil khonin hai mizban



umdah khawan maizban khoo hai



fasal aayi hai rang مستوں ki



tab_h diwarِ gulisitan khoo hai



har tamashaayi mudai thehra



par to zakham khoo chuka khoo hai



mein hon be daagh دامناں mohtaat



nafs khoo گرفتگاں khoo hai



Ghuncha ha zakham, zakham ha almaas



shabnam baagh imteha khoo hai



is taraf kohkn idhar sheree



aur dono ke darmiyan khoo hai



be dilon ko nah چھیڑیو ke yeh qoum



amtِ shoq raaygan khoo hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se