Zakham Samana By Jaun Elia -زخم ساماناں


رقصِ جاں میں ہیں 
Zakham Samana By Jaun Elia -زخم ساماناں



سر کوئے دراز مژگاناں 



اب نہیں حال سینہ کوبی کا 

آؤ سینے سے آ لگو جاناں 

میرا حق تو یہ تھا کہ گرد مرے 

ہو اک انبوہ نار پستاناں 

اپنی ورزش کے دھیان ہی سے ہمیں 

مار رکھتے ہیں صندلیں راناں 

ہائے وہ نارسائیاں جو گئیں 

بحسابِ مزاج درباناں 

داغ سینے کے کچھ ہنر تو نہ تھے 

وائے برسوخستہ گریباناں 

کر عجب، گر ہو ایک لمحہ عیش 

حاصلِ عمرِ لمحہ مہماناں 

نہ گئے تا حریمِ رنگ کبھی 

خون روتے رہے تن آساناں 

وصل تو کیا، نہیں نصیب ہمیں 

اب تمہارا فراق تک جاناں
Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


Raqs jaan mein hain


sir koye daraaz mzganaa





ab nahi haal seenah kobi ka



aoo seenay se aa lagu janaan



mera haq to yeh tha ke gird maray



ho ik anbwah naar pastanaa



apni werzish ke dheyaan hi se hamein



maar rakhtay hain sandlien raanaa



haae woh nar saainya jo gayeen



behisab mizaaj  darbana



daagh seenay ke kuch hunar to nah they



why bar sokhta girybanaa



kar ajab, gir ho aik lamha aish



hasil e umar lamha  mehmanaa



nah gay taa hareem rang kabhi



khoon rotay rahay tan asaniyaa



wasal to kya, nahi naseeb hamein



ab tumhara faraaq taq janaan

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se