Aik Gaaye Aur Bakri By Iqbal

Aik Gaaye Aur Bakri By Allama Iqbal, 

ik چراگہ hari bhari thi kahin


thi saraapaa bahhar jis ki zamee








kya samaa is bahhar ka ho bayan


har taraf saaf nadyaan theen rawan








they اناروں ke be shumaar darakht


aur peepal ke saya daar darakht




thandhi thandhi hawae aati theen


طائروں ki sadayen aati theen




kisi nadi ke paas ik bakri


chrte chrte kahin se aa niklee






jab thehr kar idhar idhar dekha


paas ik gaaye ko kharray paaya







pehlay jhuk kar usay سلام kya


phir saliqay se yun kalaam kya






kyun barri bi! mizaaj kaisay hain


gaaye boli ke kher achay hain




kat rahi hai buri bhali apni


hai museebat mein zindagi apni








jaan par aa bani hai, kya kahiye


apni qismat buri hai, kya kahiye






dekhatii hon kkhuda ki shaan ko mein


ro rahi hon baaroon ki jaan ko mein






zor chalta nahi ghareebon ka


paish aaya likha naseeboon ka






aadmi se koi bhala nah kere


is se paala parre, kkhuda nah kere






doodh kam doun to بڑبڑاتا hai


hon jo dubli to beech khata hai






hthkndon se ghulam karta hai


kin fareebon se raam karta hai








is ke bachon ko paalti hon mein


doodh se jaan daalti hon mein






badlay neki ke yeh buraiee hai


mere Allah ! tri dahai hai






sun ke bakri yeh maajra sara


boli, aisa gilah nahi aaccha




baat sachhi hai be maza lagti


mein kahoon gi magar kkhuda lagti






yeh چراگہ, yeh thandhi thandhi sun-hwa


yeh hari ghaas aur yeh sayaa






aisi khusihyan hamein naseeb kahan


yeh kahan, be zuba ghareeb kahan !






yeh mazay aadmi ke dam se hain


lutaf saaray isi ke dam se hain






is ke dam se hai apni abadi


qaid hum ko bhali, ke azaadi








so terhan ka banon mein hai khatka


wahn ki گزران se bachaaye kkhuda




hum pay ahsaan hai bara is ka


hum ko zaiba nahi gala is ka








qader aaraaam ki agar samjhoo


aadmi ka kabhi gilah nah karo








gaaye sun kar yeh baat sharmayi


aadmi ke gilaay se پچھتائی








dil mein prkha bhala bura is ny


aur kuch soch kar kaha is ny








yun to chhoti hai zaat bakri ki


dil ko lagti hai baat bakri ki





ایک گائے اور بکری
aik gaaye aur bakri



اک چراگہ ہری بھری تھی کہیں

تھی سراپا بہار جس کی زمیں





کیا سماں اس بہار کا ہو بیاں

ہر طرف صاف ندیاں تھیں رواں




تھے اناروں کے بے شمار درخت

اور پیپل کے سایہ دار درخت


ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں آتی تھیں

طائروں کی صدائیں آتی تھیں


کسی ندی کے پاس اک بکری

چرتے چرتے کہیں سے آ نکلی



جب ٹھہر کر ادھر ادھر دیکھا

پاس اک گائے کو کھڑے پایا


پہلے جھک کر اسے سلام کیا

پھر سلیقے سے یوں کلام کیا



کیوں بڑی بی! مزاج کیسے ہیں

گائے بولی کہ خیر اچھے ہیں


کٹ رہی ہے بری بھلی اپنی

ہے مصیبت میں زندگی اپنی




جان پر آ بنی ہے، کیا کہیے

اپنی قسمت بری ہے، کیا کہیے



دیکھتی ہوں خدا کی شان کو میں

رو رہی ہوں بروں کی جان کو میں






زور چلتا نہیں غریبوں کا

پیش آیا لکھا نصیبوں کا






آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے

اس سے پالا پڑے، خدا نہ کرے






دودھ کم دوں تو بڑبڑاتا ہے

ہوں جو دبلی تو بیچ کھاتا ہے





ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے

کن فریبوں سے رام کرتا ہے




اس کے بچوں کو پالتی ہوں میں

دودھ سے جان ڈالتی ہوں میں






بدلے نیکی کے یہ برائی ہے

میرے اللہ! تری دہائی ہے




سن کے بکری یہ ماجرا سارا


بولی، ایسا گلہ نہیں اچھا




بات سچی ہے بے مزا لگتی


میں کہوں گی مگر خدا لگتی






یہ چراگہ، یہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا


یہ ہری گھاس اور یہ سایا






ایسی خوشیاں ہمیں نصیب کہاں


یہ کہاں، بے زباں غریب کہاں!






یہ مزے آدمی کے دم سے ہیں


لطف سارے اسی کے دم سے ہیں






اس کے دم سے ہے اپنی آبادی


قید ہم کو بھلی، کہ آزادی








سو طرح کا بنوں میں ہے کھٹکا


واں کی گزران سے بچائے خدا






ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا


ہم کو زیبا نہیں گلا اس کا








قدر آرام کی اگر سمجھو


آدمی کا کبھی گلہ نہ کرو








گائے سن کر یہ بات شرمائی


آدمی کے گلے سے پچھتائی








دل میں پرکھا بھلا برا اس نے


اور کچھ سوچ کر کہا اس نے








یوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی


دل کو لگتی ہے بات بکری کی




English Translation

ایک گائے اور بکری




اک چراگہ ہری بھری تھی کہیں

تھی سراپا بہار جس کی زمیں




A COW AND A GOAT

There was a verdant pasture somewhere, 
whose land was the very picture of beauty.

کیا سماں اس بہار کا ہو بیاں

ہر طرف صاف ندیاں تھیں رواں




How can the beauty of that elegance be described? 
Brooks of sparkling water were running on every side.

تھے اناروں کے بے شمار درخت

اور پیپل کے سایہ دار درخت




Many were the pomegranate trees 
and so were the shady papal* trees.

* A large shady tree of the Indian sub-continent.)

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں آتی تھیں

طائروں کی صدائیں آتی تھیں




Cool breeze flowed everywhere; 
Birds were singing everywhere.

کسی ندی کے پاس اک بکری

چرتے چرتے کہیں سے آ نکلی




A goat arrived at a brook's bank from somewhere. 
It came browsing from somewhere in the nearby land.

جب ٹھہر کر ادھر ادھر دیکھا

پاس اک گائے کو کھڑے پایا




As she stopped and looked around, 
she noticed a cow standing by.

پہلے جھک کر اسے سلام کیا

پھر سلیقے سے یوں کلام کیا




The goat first presented her compliments to the cow, 
then respectfully started this conversation.

کیوں بڑی بی! مزاج کیسے ہیں

گائے بولی کہ خیر اچھے ہیں




How are you! Madam Cow’? 
The cow replied, ‘Not too well.

کٹ رہی ہے بری بھلی اپنی

ہے مصیبت میں زندگی اپنی




My life is mere existence. 
My life is complete agony.

جان پر آ بنی ہے، کیا کہیے

اپنی قسمت بری ہے، کیا کہیے




My life is in danger, what can I say? 
My luck is bad, what can I say?

دیکھتی ہوں خدا کی شان کو میں

رو رہی ہوں بروں کی جان کو میں




I am surprised at the state of affairs. 
I am cursing the evil people.

زور چلتا نہیں غریبوں کا

پیش آیا لکھا نصیبوں کا




The poor ones like us are powerless; 
misfortunes surround the ones like us.

آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے

اس سے پالا پڑے، خدا نہ کرے




None should nicely deal with Man. 
May God protect us from Man!

دودھ کم دوں تو بڑبڑاتا ہے

ہوں جو دبلی تو بیچ کھاتا ہے




He murmurs if my milk declines; 
he sells me if my weight declines.

ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے

کن فریبوں سے رام کرتا ہے




He subdues us with cleverness! Alluring,
he always subjugates us!

اس کے بچوں کو پالتی ہوں میں

دودھ سے جان ڈالتی ہوں میں




I nurse his children with milk. 
I give them new life with milk.

بدلے نیکی کے یہ برائی ہے

میرے اللہ! تری دہائی ہے




My goodness is repaid with evil. 
My prayer to God is for mercy!’

سن کے بکری یہ ماجرا سارا

بولی، ایسا گلہ نہیں اچھا




Having heard the cow's story like this,
 the goat replied: ‘This complaint is unjust.

بات سچی ہے بے مزا لگتی

میں کہوں گی مگر خدا لگتی




Though truth is always bitter; 
I shall speak what is fair.

یہ چراگہ، یہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا

یہ ہری گھاس اور یہ سایا




This pasture and this cool breeze; 
this green grass and this shade.

ایسی خوشیاں ہمیں نصیب کہاں

یہ کہاں، بے زباں غریب کہاں!




Such comforts were beyond our lot! 
They were a far cry for us speechless poor!

یہ مزے آدمی کے دم سے ہیں

لطف سارے اسی کے دم سے ہیں




We owe these pleasures to Man. 
We owe all our happiness to Man.

اس کے دم سے ہے اپنی آبادی

قید ہم کو بھلی، کہ آزادی




We derive all our prosperity from him. 
What is better for us, freedom or bondage to him?

سو طرح کا بنوں میں ہے کھٹکا

واں کی گزران سے بچائے خدا




Hundreds of dangers lurk in the wilderness. 
May God protect us from the wilderness!

ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا

ہم کو زیبا نہیں گلا اس کا




We are heavily indebted to him; 
unjust is our complaint against him.

قدر آرام کی اگر سمجھو

آدمی کا کبھی گلہ نہ کرو




If you appreciate the life's comforts; 
you would never complain against Man.

گائے سن کر یہ بات شرمائی

آدمی کے گلے سے پچھتائی




Hearing all this the cow felt embarrassed. 
She was sorry for complaining against Man.

دل میں پرکھا بھلا برا اس نے

اور کچھ سوچ کر کہا اس نے




She mused over the good and 
the bad and thoughtfully she said this:

یوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی

دل کو لگتی ہے بات بکری کی




‘Small though is the body of the goat; 
convincing is the advice of the goat!’

[Translated by M.A.K.Khalil]

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Hai Tamana Naye Shaam By Jaun Elia