Aik Makra Aur Makhi By Allama Iqbal

ایک مکڑا اور مکھی
aik makra aur makhi


اک دن کسی مکھی سے یہ کہنے لگا مکڑا


اس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا






aik din kesi makhi sey yeh kahney laga makra
es raah sey hotey roz guzar tumhra



لیکن مری کٹیا کی نہ جاگی کبھی قسمت


بھولے سے کبھی تم نے یہاں پائوں نہ رکھا


lekin meri gher ki na jagi kabhi kismat
bhooley se bhi kabhi tum yaha pao na rakha





غیروں سے نہ ملیے تو کوئی بات نہیں ہے


اپنوں سے مگر چاہیے یوں کھنچ کے نہ رہنا


ghairo sey milye toh kio baat nehi
apno sey magar chahye yuh kheech k na rehna




آئو جو مرے گھر میں تو عزت ہے یہ میری


وہ سامنے سیڑھی ہے جو منظور ہو آنا


ao jo mere gher mein toh izat haii yeh meri
woh samney shiri hai jo manzor ho ana



مکھی نے سنی بات جو مکڑے کی تو بولی


حضرت! کسی نادان کو دیجے گا یہ دھوکا


makhi ney sunni baat jo makrey ki toh boli
hazrat kisi nadaan ko dijye ga yeh dhoka









اس جال میں مکھی کبھی آنے کی نہیں ہے


جو آپ کی سیڑھی پہ چڑھا، پھر نہیں اترا
es jaaal mein makhi kabhi aaney ki nehi hai
jo app ki siri pay charha phir nehi utra







مکڑے نے کہا واہ! فریبی مجھے سمجھے


تم سا کوئی نادان زمانے میں نہ ہو گا


makray nay kaha wah fareeebi majhey samjhey
tum saa nadaan zamaney mein na ho ga








منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ


کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس میں نہیں تھا
manzor tumhri majhey khatir thi warna
kuch fiyda apna toh mera es mein nehi tha





اڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے




ٹھہرو جو مرے گھر میں تو ہے اس میں برا کیا!




urti hui ayi ho khuda janey kaha sey
tahro jo mere gher mein toh hai es mein bura kiya





اس گھر میں کئی تم کو دکھانے کی ہیں چیزیں


باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی یہ کٹیا
es gher mein kayi tum ko dhekaney ki hai cheazien
bahar sey nazar ata hai chota sa yeh gher





لٹکے ہوئے دروازوں پہ باریک ہیں پردے


دیواروں کو آئینوں سے ہے میں نے سجایا


latkey hue darwazo pay bareek hai parday
dawaro ko aaney sey hai maine sajaya









مہمانوں کے آرام کو حاضر ہیں بچھونے


ہر شخص کو ساماں یہ میسر نہیں ہوتا
mehmano k aram ko hazir hai bajchoney
har shaks ko samaa yeh masir nehi hota







مکھی نے کہا خیر، یہ سب ٹھیک ہے لیکن


میں آپ کے گھر آئوں، یہ امید نہ رکھنا
makhi ney kaha khair sub theak hai lekin
main app k gher ao yeh umeed na rakhna









ان نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے


سو جائے کوئی ان پہ تو پھر اٹھ نہیں سکتا
en naram bejchono sey khuda majh ko bachaye
so jaye kio en per toh phir uth nehi sakta









مکڑے نے کہا دل میں سنی بات جو اس کی


پھانسوں اسے کس طرح یہ کم بخت ہے دانا
makhrey ney kaha dil mein kaha suni baat jo makhi ki
phaaanso es ko kis tarha kambakht hai danaaa









سو کام خوشامد سے نکلتے ہیں جہاں میں


دیکھو جسے دنیا میں خوشامد کا ہے بندا
so kam khusamand sey nikaltey hai jaha mein
dheko jisey dunya mein khusamand ka hai banda





یہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی !


اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رتبا


yeh soch ka makhi sey kaha 
Allah nay app ko bakhsa hai bara appko rutba











ہوتی ہے اسے آپ کی صورت سے محبت


ہو جس نے کبھی ایک نظر آپ کو دیکھا


hoti hai esey app ki sorat sey muhabbat
ho jis ney kabhi aik nazar app ko dheka






آنکھیں ہیں کہ ہیرے کی چمکتی ہوئی کنیاں


سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجایا
aaankhein hai hirey ki chamakti hui kaniya
sar app ka Allah nay kulgi sey sajaya













یہ حسن، یہ پوشاک، یہ خوبی، یہ صفائی


پھر اس پہ قیامت ہے یہ اڑتے ہوئے گانا


yeh husun yeh poshak yeh khoobi yeh safai
phir es pay qayamat hai yeh urtay hue gana





مکھی نے سنی جب یہ خوشامد تو پسیجی


بولی کہ نہیں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا


makhi ney suni jab yeh khusamand toh pasijiii
boli k nehi app sey majh kio dar/ katka







انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا میں


سچ یہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہیں ہوتا


inkar ki adat ko samjhti ho bura main
sach yeh hai k dil torna acha nehi hota













یہ بات کہی اور اڑی اپنی جگہ سے


پاس آئی تو مکڑے نے اچھل کر اسے پکڑا


yeh baat kahi aur uri apni jaga sey
pass ayi toh makray ney uchal kar esy pakar liya



بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی


آرام سے گھر بیٹھ کے مکھی کو اڑایا


bhooka tha kayi roz e ab hath jo ayi
aram sey gher mein baith k makhi ko khao ga









ایک مکڑا اور مکھی







اک دن کسی مکھی سے یہ کہنے لگا مکڑا

اس راہ سے ہوتا ہے گزر روز تمھارا




A SPIDER AND A FLY

One day a spider said to a fly: 
‘Though you pass this way daily.

لیکن مری کٹیا کی نہ جاگی کبھی قسمت

بھولے سے کبھی تم نے یہاں پائوں نہ رکھا

کٹیا: جھونپڑی۔

My hut has never been honored by you 
by making a chance to visit inside by you.

غیروں سے نہ ملیے تو کوئی بات نہیں ہے

اپنوں سے مگر چاہیے یوں کھنچ کے نہ رہنا




Though depriving strangers of a visit does not matter; 
evading the near and dear ones does not look good.

آئو جو مرے گھر میں تو عزت ہے یہ میری

وہ سامنے سیڑھی ہے جو منظور ہو آنا




My house will be honoured by a visit by you; 
a ladder is before you if you decide to step in.

مکھی نے سنی بات جو مکڑے کی تو بولی

حضرت! کسی نادان کو دیجے گا یہ دھوکا




Hearing this the fly said to the spider: 
‘Sire, you should entice some simpleton thus:

اس جال میں مکھی کبھی آنے کی نہیں ہے

جو آپ کی سیڑھی پہ چڑھا، پھر نہیں اترا




This fly would never be pulled into your net, 
whoever climbed your net could never step down.

مکڑے نے کہا واہ! فریبی مجھے سمجھے

تم سا کوئی نادان زمانے میں نہ ہو گا




The spider said: ‘How strange, you consider me a cheat, 
I have never seen a simpleton like you in the world.

منظور تمھاری مجھے خاطر تھی وگرنہ

کچھ فائدہ اپنا تو مرا اس میں نہیں تھا




I only wanted to entertain you. 
I had no personal gain in view.

اڑتی ہوئی آئی ہو خدا جانے کہاں سے

ٹھہرو جو مرے گھر میں تو ہے اس میں برا کیا!




You have come flying from some unknown distant place; 
resting for a while in my house would not harm you.

اس گھر میں کئی تم کو دکھانے کی ہیں چیزیں

باہر سے نظر آتا ہے چھوٹی سی یہ کٹیا




Many things in this house are worth your seeing; 
though apparently a humble hut you are seeing.

لٹکے ہوئے دروازوں پہ باریک ہیں پردے

دیواروں کو آئینوں سے ہے میں نے سجایا




Dainty drapes are hanging from the doors 
and I have decorated the walls with mirrors.

مہمانوں کے آرام کو حاضر ہیں بچھونے

ہر شخص کو ساماں یہ میسر نہیں ہوتا




Beddings are available for guests’ comforts; 
not to everyone’s lot do fall these comforts’.

مکھی نے کہا خیر، یہ سب ٹھیک ہے لیکن

میں آپ کے گھر آئوں، یہ امید نہ رکھنا




The fly said: ‘All this may very well be, 
but do not expect me to enter your house.

ان نرم بچھونوں سے خدا مجھ کو بچائے

سو جائے کوئی ان پہ تو پھر اٹھ نہیں سکتا




May God protect me from these soft beds; 
once asleep in them getting up again is impossible.’

مکڑے نے کہا دل میں سنی بات جو اس کی

پھانسوں اسے کس طرح یہ کم بخت ہے دانا




The spider spoke to itself on hearing this talk: 
‘How to trap it? This wretched fellow is clever.

سو کام خوشامد سے نکلتے ہیں جہاں میں

دیکھو جسے دنیا میں خوشامد کا ہے بندا




Many desires are fulfilled with flattery in the world; 
all in the world are enslaved with flattery.’

یہ سوچ کے مکھی سے کہا اس نے بڑی بی !

اللہ نے بخشا ہے بڑا آپ کو رتبا




Thinking this the spider spoke to the fly thus! 
’Madam, God has bestowed great honours on you!

ہوتی ہے اسے آپ کی صورت سے محبت

ہو جس نے کبھی ایک نظر آپ کو دیکھا




Everyone loves your beautiful face; 
even if someone sees you for the first time.

آنکھیں ہیں کہ ہیرے کی چمکتی ہوئی کنیاں

سر آپ کا اللہ نے کلغی سے سجایا




Your eyes look like clusters of glittering diamonds. 
God has adorned your beautiful head with a plume.

یہ حسن، یہ پوشاک، یہ خوبی، یہ صفائی

پھر اس پہ قیامت ہے یہ اڑتے ہوئے گانا




This beauty, this dress, this elegance, this neatness! 
And all this is very much enhanced by singing in flight.’

مکھی نے سنی جب یہ خوشامد تو پسیجی

بولی کہ نہیں آپ سے مجھ کو کوئی کھٹکا




The fly was touched by this flattery and spoke: 
‘I do not fear you any more.

انکار کی عادت کو سمجھتی ہوں برا میں

سچ یہ ہے کہ دل توڑنا اچھا نہیں ہوتا




I hate the habit of declining requests; 
disappointing somebody is bad indeed.’

یہ بات کہی اور اڑی اپنی جگہ سے

پاس آئی تو مکڑے نے اچھل کر اسے پکڑا




Saying this it flew from its place 
when it got close the spider snapped it.

بھوکا تھا کئی روز سے اب ہاتھ جو آئی

آرام سے گھر بیٹھ کے مکھی کو اڑایا




The spider had been starving for many days. 
The fly provided a good leisurely meal.

[Translated by M.A.K.Khalil]

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se