Hai Bulandi Se Fallak Bose Nashiman Mera


hai bulandi se fallak bose nashiman mera

abr kuhsaar hon Gul paash hai daman mera



kabhi sehraa, kabhi gullzaar hai maskan mera

shehar o virana mra, behar mra, ban mera



kisi waadi mein jo Manzoor ho sona mujh ko

sabza koh hai makhmal ka bichona mujh ko




mujh ko qudrat ne sikhaya hai Durfishan hona

naqa Shahid rehmat ka Haddy khwan hona



gham زدائے dil afsurdah d_hqan hona

ronaqe bazm جوانان gulisitan hona



ban ke gaisu rukh hasti pay bikhar jata hon

shana mojah sar sar se sanvar jata hon



daur se deedaa umeed ko ترساتا hon

kisi bastii se jo khamosh guzar jata hon



sair karta sun-hwa jis dam lab jo aata hon

balian neher ko gardaab ki pehnata hon




sabza mazra nokhaiz ki umeed hon mein

zaadah behar hon parvardaah Khurshid hon mein




chashma koh ko di shorish Qalzum mein ne

aur parindon ko kya mehv tarannum mein ne






sir pay sabzay ke kharray ho ke kaha qm mein ne

Ghuncha Gul ko diya zouq tabassum mein ne





Faiz se mere namoonay hain shabistaanon ke

jhonparey daman kuhsaar mein dehqanon ke


ہے بلندی سے فلک بوس نشیمن میرا

ابر کہسار ہوں گل پاش ہے دامن میرا



کبھی صحرا، کبھی گلزار ہے مسکن میرا

شہر و ویرانہ مرا، بحر مرا، بن میرا



کسی وادی میں جو منظور ہو سونا مجھ کو

سبزہ کوہ ہے مخمل کا بچھونا مجھ کو




مجھ کو قدرت نے سکھایا ہے درافشاں ہونا

ناقہ شاہد رحمت کا حدی خواں ہونا



غم زدائے دل افسردہ دہقاں ہونا

رونق بزم جوانان گلستاں ہونا



بن کے گیسو رخ ہستی پہ بکھر جاتا ہوں

شانہ موجہ صرصر سے سنور جاتا ہوں



دور سے دیدہ امید کو ترساتا ہوں

کسی بستی سے جو خاموش گزر جاتا ہوں




سیر کرتا ہوا جس دم لب جو آتا ہوں

بالیاں نہر کو گرداب کی پہناتا ہوں




سبزہ مزرع نوخیز کی امید ہوں میں

زادہ بحر ہوں پروردہ خورشید ہوں میں




چشمہ کوہ کو دی شورش قلزم میں نے

اور پرندوں کو کیا محو ترنم میں نے






سر پہ سبزے کے کھڑے ہو کے کہا قم میں نے

غنچہ گل کو دیا ذوق تبسم میں نے





فیض سے میرے نمونے ہیں شبستانوں کے

جھونپڑے دامن کہسار میں دہقانوں کے







In Urdu With Meaning And Translation

ابر کوہسار




ہے بلندی سے فلک بوس نشیمن میرا

ابر کہسار ہوں گل پاش ہے دامن میرا



فلک بوس: آسمان کو چومنے والا یعنی بہت بلند۔ 

گل پاش: پھول برسانے والا۔

THE CLOUD ON THE MOUNTAIN

Elevation bestows the sky's nearness to my abode; 
I am the mountain's cloud, my skirt sprinkles roses.


کبھی صحرا، کبھی گلزار ہے مسکن میرا

شہر و ویرانہ مرا، بحر مرا، بن میرا




Now the wilderness, now the rose garden is my abode, city 
and wilderness are mine, ocean is mine, forest is mine.


کسی وادی میں جو منظور ہو سونا مجھ کو

سبزہ کوہ ہے مخمل کا بچھونا مجھ کو




If I want to return to some valley for the night; 
the mountain's verdure is my carpet of velvet.


مجھ کو قدرت نے سکھایا ہے درافشاں ہونا

ناقہ شاہد رحمت کا حدی خواں ہونا



ناقہ: اونٹنی۔

درافشاں: موتی بکھیرنا۔

Nature has taught me to be a pearl spreader’ 
to chant the camel song for the camel of the Beloved of Mercy.



غم زدائے دل افسردہ دہقاں ہونا

رونق بزم جوانان گلستاں ہونا




To be the comforter of the dispirited farmer's heart; 
to be the elegance of the assembly of the garden's trees.



بن کے گیسو رخ ہستی پہ بکھر جاتا ہوں

شانہ موجہ صرصر سے سنور جاتا ہوں



شانہ موجہء صرصر: ہوا کا جھونکا۔

I spread out over the face of the earth like the locks; 
I get arranged and adorned by the breeze's.


دور سے دیدہ امید کو ترساتا ہوں

کسی بستی سے جو خاموش گزر جاتا ہوں



I tantalize the expecting eye from a distance 
as I pass silently over some habitation.



سیر کرتا ہوا جس دم لب جو آتا ہوں

بالیاں نہر کو گرداب کی پہناتا ہوں



لب جو: ندی کنارے۔

As I approach strolling towards a brook's bank; 
I endow the brook with ear rings of whirlpools.



سبزہ مزرع نوخیز کی امید ہوں میں

زادہ بحر ہوں پروردہ خورشید ہوں میں



مزرع نوخیز: نئی اگی ہوئی کھیتی۔ 

زادہ بحر: جو سمندر سے پیدا ہوا ہو۔

I am the hope of the freshly grown field's verdure; 
I am the ocean's offspring, I am nourished by the sun.



چشمہ کوہ کو دی شورش قلزم میں نے

اور پرندوں کو کیا محو ترنم میں نے



I gave ocean's tumult to the mountain spring; 
I charmed the birds into thrilling chants.



سر پہ سبزے کے کھڑے ہو کے کہا قم میں نے

غنچہ گل کو دیا ذوق تبسم میں نے



قم: اٹھ، کھڑا ہو۔

I pronounced ‘Rise’* standing by the verdure's head; 
I conferred the taste for smile to the rose-bud.

* This is an allusion to the miracle of Ibn-e-Maryam (A.S.) in which, he used to raise the dead to life by pronouncing ‘Qum bi Idhnillah’ (Rise with the permission of God) Just as he used to raise the dead to life with the permission of God so does the rain from cloud raise the apparently dead vegetation to life with the permission of God: The Holy Qur’an 78:14-16.



فیض سے میرے نمونے ہیں شبستانوں کے

جھونپڑے دامن کہسار میں دہقانوں کے



شبستانوں: امیر لوگوں کے سونے کی جگہ۔

By my benevolence farmers' huts on 
the mountain side are converted into bed chambers of the opulent.

(Translated by Dr M A K Khalil)

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se