Yaran Hai By Jaun Elia - ہجوم یاراں ہے


غبارِ محمل گل پر ہجوم یاراں ہے 
Yaran Hai By Jaun Elia -  ہجوم یاراں ہے

کہ ہر نفس، نفسِ آخرِ بہاراں ہے 



بتاؤ وجد کروں یا لبِ سخن کھولوں 

ہوں مستِ راز اور انبوہ رازداراں ہے 

مٹا ہوا ہوں شباہت پہ نامداروں کی 

چلا ہوں کہ یہی وضعِ نامداراں ہے 

چلا ہوں پھر سرِ کوئے دراز مژگاں 

مرا ہنر زخم تازہ داراں ہے 

یہی وقت کہ آغوش دار رقص کروں 

سرورِ نیم شبی ہے صفِ نگاراں ہے 

ہوا ہے وقت کہیں سے علیم کو لاؤ 

ہے ایک شخص جو کمبخت یارِ یاراں ہے 

فراق یار کو ٹھیرا لیا ہے عذرِ ہوس 

کوئی بتاؤ یہی رسمِ سوگواراں ہے
Check this out



gubhar mehmil Gul par hajhoom yaran hai


ke har nafs, nafs aakhrِ baharaan hai




بتاؤ wajad karoon ya lbِ sukhan kholon



hon Mast raaz aur anbwah رازداراں hai



mita sun-hwa hon shabahat pay نامداروں ki



chala hon ke yahi waza نامداراں hai



chala hon phir sar-e koye daraaz مژگاں



mra hunar zakham taaza داراں hai



yahi waqt ke agosh daar raqs karoon



srorِ name shabi hai sfِ نگاراں hai



sun-hwa hai waqt kahin se Aleem ko لاؤ



hai 1 shakhs jo kambakht Yaar yaran hai



faraaq yaar ko ٹھیرا liya hai izr hawas



koi بتاؤ yahi rasm-e سوگواراں hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se