Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se

Mirza ghalib

fikar insaa par tri hasti se yeh roshan sun-hwa
hai par murgh takhayyul ki rasai taa kja

tha saraapaa rooh to, bazm sukhan paiker tra
Zaib mehfl bhi raha mehfl se panhan bhi raha

deed teri aankhh ko is husn ki Manzoor hai
ban ke soaz zindagi har shai mein jo Mastoor hai

mehfl hasti tri barbat se hai sarmaya daar
jis terhan nadi ke naghmon se sukut kohsar

tairay Firdous takhayyul se hai qudrat ki bahhar
teri kasht fikar se ugte hain aalam sabza waar

zindagi Muzmer hai teri shokhi tehreer mein
taab goyai se junbish hai lab tasweer mein

nutq ko so naz hain tairay lab Ejaaz par
mehv herat hai Surriya ray

مرزا غالب

فکر انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہوا
ہے پر مرغ تخیل کی رسائی تا کجا

تھا سراپا روح تو، بزم سخن پیکر ترا
زیب محفل بھی رہا محفل سے پنہاں بھی رہا

دید تیری آنکھ کو اس حسن کی منظور ہے
بن کے سوز زندگی ہر شے میں جو مستور ہے

محفل ہستی تری بربط سے ہے سرمایہ دار
جس طرح ندی کے نغموں سے سکوت کوہسار

تیرے فردوس تخیل سے ہے قدرت کی بہار
تیری کشت فکر سے اگتے ہیں عالم سبزہ وار

زندگی مضمر ہے تیری شوخی تحریر میں
تاب گویائی سے جنبش ہے لب تصویر میں

نطق کو سو ناز ہیں تیرے لب اعجاز پر
محو حیرت ہے ثریا رفعت پرواز پر

شاہد مضموں تصدق ہے ترے انداز پر
خندہ زن ہے غنچہ دلی گل شیراز پر

آہ! تو اجڑی ہوئی دلی میں آرامیدہ ہے
گلشن ویمر میں تیرا ہم نوا خوابیدہ ہے

لطف گویائی میں تیری ہمسری ممکن نہیں
ہو تخیل کا نہ جب تک فکر کامل ہم نشیں

.
ہائے! اب کیا ہو گئی ہندوستاں کی سر زمیں
آہ! اے نظارہ آموز نگاہ نکتہ بیں

گیسوئے اردو ابھی منت پذیر شانہ ہے
شمع یہ سودائی دل سوزی پروانہ ہے

اے جہان آباد، اے گہوارہ علم و ہنر
ہیں سراپا نالہ خاموش تیرے بام و در
ذرے ذرے میں ترے خوابیدہ ہیں شمں و قمر
یوں تو پوشیدہ ہیں تیری خاک میں لاکھوں گہر

دفن تجھ میں کوئی فخر روزگار ایسا بھی ہے؟
تجھ میں پنہاں کوئی موتی آبدار ایسا بھی ہے؟



مرزا غالب

فکر انساں پر تری ہستی سے یہ روشن ہوا
ہے پر مرغ تخیل کی رسائی تا کجا

Through you the secret was revealed to the human intellect that innumerable enigmas are solved by human intellect.
تھا سراپا روح تو، بزم سخن پیکر ترا
زیب محفل بھی رہا محفل سے پنہاں بھی رہا

You were the complete soul; literary assembly was your body. You adorned as well as remained veiled from the assembly.
(This is an allusion to the lack of recognition of Ghalib's genius at the court of Bahadur Shah, the last Mughal Emperor of India. It also means that, though you adorned the literary assemblies and were bodily visible, your real self could not be seen except by those with insight.)
دید تیری آنکھ کو اس حسن کی منظور ہے
بن کے سوز زندگی ہر شے میں جو مستور ہے

Your eye is longing to witness that veiled Beauty which is veiled in everything as the pathos of life.
(This refers to the Sufi concept of Wahdat al-Wujood according to which everything in the universe is God in different forms.)
محفل ہستی تری بربط سے ہے سرمایہ دار
جس طرح ندی کے نغموں سے سکوت کوہسار

The assemblage of existence is rich with your harp as mountain's silence by the brook's melodious harp.
تیرے فردوس تخیل سے ہے قدرت کی بہار
تیری کشت فکر سے اگتے ہیں عالم سبزہ وار

The garden of your imagination bestows glory on the universe from the field of your thought worlds grow like meadows.
زندگی مضمر ہے تیری شوخی تحریر میں
تاب گویائی سے جنبش ہے لب تصویر میں

Life is concealed in the humour of your verse picture's lips move with your command of language.
نطق کو سو ناز ہیں تیرے لب اعجاز پر
محو حیرت ہے ثریا رفعت پرواز پر

Speech is very proud of the elegance of your miraculous lips; Thurayyah is astonished at your style's elegance.
شاہد مضموں تصدق ہے ترے انداز پر
خندہ زن ہے غنچہ دلی گل شیراز پر

Beloved of literature itself loves your style: Delhi's bud is mocking at the rose of Shiraz.
(This is an allusion to Muhammad Shams al-Din Hafiz, who was an eminent Persian poet of Iran and lived in Shiraz.)
آہ! تو اجڑی ہوئی دلی میں آرامیدہ ہے
گلشن ویمر میں تیرا ہم نوا خوابیدہ ہے

Ah! You are resting in the midst of Delhi’s ruins; your counterpart is resting in the Weimar's* garden.
* German poet Goethe who is buried in Weimar, Germany.)
لطف گویائی میں تیری ہمسری ممکن نہیں
ہو تخیل کا نہ جب تک فکر کامل ہم نشیں

Matching you in literary elegance is not possible till maturity of thought and imagination are combined.
ہائے! اب کیا ہو گئی ہندوستاں کی سر زمیں
آہ! اے نظارہ آموز نگاہ نکتہ بیں

Ah! What has befallen the land of India! Ah! The inspirer of the super-critical eye!
گیسوئے اردو ابھی منت پذیر شانہ ہے
شمع یہ سودائی دل سوزی پروانہ ہے

The lock of Urdu's hair still craves for combing this candle still craves for moth's heart-felt pathos.
اے جہان آباد، اے گہوارہ علم و ہنر
ہیں سراپا نالہ خاموش تیرے بام و در

O Jahanabad*! O cradle of learning and art your entire super-structure is a silent lament.
* Abbreviation for Shahjahanabad, which is the original name of Delhi after its construction under the Mughal Emperor Shahjahan.)
ذرے ذرے میں ترے خوابیدہ ہیں شمں و قمر
یوں تو پوشیدہ ہیں تیری خاک میں لاکھوں گہر

The sun and the moon are asleep in every speck of your dust; though innumerable other gems are also hidden in your dust.
دفن تجھ میں کوئی فخر روزگار ایسا بھی ہے؟
تجھ میں پنہاں کوئی موتی آبدار ایسا بھی ہے؟

Does another world-famous person like him also lie buried in you? Does another gem like him also lie concealed in you?
(Translated by Dr M A K Khalil)

Post a Comment

1 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Share your thoughts with me

Featured Post

 Tere Baghair Bhi By Jaun Elia

Top Post Ad