Eid Zindaah By Jaun Elia

  

عید زنداں 


 

اہلِ زنداں عیدِ زنداں آئی ہے

نکہتِ صحنِ گلستاں آئی ہے

مژدہ باوائے حسرتِ شب زندہ دار

آرزوئے صبح خیزاں آئی ہے

روحِ صبح و شام باصد اشتیاق

پائے کوباں دست افشاں آئی ہے

زندگی کی دُور اُفتادہ خوشی

خندہ برلب اشک افشاں آئی ہے

اے خس و خاشاکِ راہِ نازکاں

جانبِ سِقط اللویٰ کے ساتھیو

منزل جمّازہ راناں آئی ہے

اے سمیرا، اے عنیزہ، اے سُعاد

نازشِ مژگاں درازاں آئی ہے

قرۃ العینِ عزیزاں آئی ہے

دستہ دستہ داغہائے دل سجیں

خوش نگاہِ خوش نگاہاں آئی ہے

آج تو خوں سے جلانے ہیں چراغ

آج تو شامِ چراغان آئی ہے

نعرہ ہا بانالہ ہا فریاد ہا!

جانِ نادرماں پذیراں آئی ہے

ساز ہا، آواز ہا، شہناز ہا!

مطربِ جاں، جانِ جاناں آئی ہے

تاجدارِ نجدِ خوباں فارہہ

تاجدارِ نجدِ خوباں آئی ہے

کج کلاہِ کشورِ جاں فارہہ

کج کلاہِ کشورِ جاں آئی ہے

اے دلِ بربط نوازِ آرزو

نوبتِ تارِ رگِ جاں آئی ہے

کتنی سادہ دل ہے میری زندگی

مجھ سے محجوب و پشیماں آئی ہے

جون آخر کیا کرو گے نذرِ شوق؟

ارجمندِ ارجمنداں آئی ہے 

 

پیش کر دے اے دلِ اندوہگیں

درد، جو اب قابلِ درماں نہیں

تشنگی، جو زہر پی کر رہ گئی

خوش دلی، جو آنسوؤں میں بہہ گئی 

 

ارجمندِ ارجمنداں کیا کہوں

زندگی ہے کس قدر زار و زبوں

ہے زمانہ میرے حق میں بے نوید

میں ہوں اپنی آرزوؤں کا شہید

آرزوؤیں نارسی کا جبر ہیں

زندگی ہیں زندگی کا جبر ہیں

جبر جوئے شیر بھی شیریں بھی ہے

حُسن بھی ہے حیلہِ سنگیں بھی ہے 

 

فن کے حق میں حیلہِ سنگیں ہے جبر

جوئے شیر و تیشہِ خونیں ہے جبر

موج خیزِ جبر میں ہم تہ نشیں

اِنتخابِ موج پر قادر نہیں  

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Yaro k Humra Chaley By Jaun Elia