Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Hum Rahe Nehi Rahe Abaad By Jaun Elia

Hum Rahe Nehi Rahe Abaad By Jaun Elia


  

ہم رہے پر نہیں رہے آباد

یاد کے گھر نہیں رہے آباد 

 

کتنی آنکھیں ہوئی ہلاک ِ نظر

کتنے منظر نہیں رہے آباد 

 

ہم کہ اے دل سخن تھے سر تا پا

ہم لبوں پر نہیں رہے آباد 

 

شہرِ دل میں عجب محلے تھے

جن میں اکثر نہیں رہے آباد 

 

جانے کیا واقعہ ہوا، کیوں لوگ

اپنے اندر نہیں رہے آباد
Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.