Kia Hue By Jaun Elia- کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

 


 

کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

یادِ یاراں یار، یاراں کیا ہوئے 

اب تو اپنوں میں سے کوئی بھی نہیں

وہ پریشاں روزگاراں کیا ہوئے 

سو رہا ہے شام ہی سے شہرِ دل

شہر کے شب زندہ داراں کیا ہوئے 

اس کی چشمِ نیم وا سے پوچھیو

وہ ترے مژگاں شماراں کیا ہوئے 

اے بہارِ انتظارِ فصلِ گل

وہ گریباں تار تاراں کیا ہوئے 

کیا ہوئے صورت نگاراں خواب کے

خواب کے صورت نگاراں کیا ہوئے 

یاد اس کی ہوگئی ہے بے اماں

یاد کے بے یادگاراں کیا ہوئے 

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Hai Tamana Naye Shaam By Jaun Elia