Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Kia Hue By Jaun Elia- کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

 


 

کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

یادِ یاراں یار، یاراں کیا ہوئے 

اب تو اپنوں میں سے کوئی بھی نہیں

وہ پریشاں روزگاراں کیا ہوئے 

سو رہا ہے شام ہی سے شہرِ دل

شہر کے شب زندہ داراں کیا ہوئے 

اس کی چشمِ نیم وا سے پوچھیو

وہ ترے مژگاں شماراں کیا ہوئے 

اے بہارِ انتظارِ فصلِ گل

وہ گریباں تار تاراں کیا ہوئے 

کیا ہوئے صورت نگاراں خواب کے

خواب کے صورت نگاراں کیا ہوئے 

یاد اس کی ہوگئی ہے بے اماں

یاد کے بے یادگاراں کیا ہوئے 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

 Tere Baghair Bhi By Jaun Elia

Top Post Ad