Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Kio Halat Nehi Yeh Halat Hai By Jaun Elia

Kio Halat Nehi Yeh Halat Hai By Jaun Elia


  

کوئی حالت نہیں یہ حالت ہے

یہ تو آشوب ناک صورت ہے 

انجمن میں یہ میری خاموشی

بُردباری نہیں ہے وحشت ہے 

طنز پیرایہء تبسم میں

اس تکلف کی کیا ضرورت ہے 

تجھ سے یہ گاہ گاہ کا شکوہ

جب تلک ہے بسا غنیمت ہے 

گرم جوشی اور اس قدر، کیا بات

کیا تمہیں مجھ سے کچھ شکایت ہے 

تُو بھی اے شخص کیا کرے آخر

مجھ کو سر پھوڑنے کی عادت ہے 

اب نکل آؤ اپنے اندر سے

گھر میں سامان کی ضرورت ہے 

ہم نے جانا تو ہم نے یہ جانا

جو نہیں ہے وہ خوبصورت ہے 

خواہشیں دل کا ساتھ چھوڑ گئیں

یہ اذیت بڑی اذیت ہے 

لوگ مصروف جانتے ہیں مجھے

یاں میرا غم ہی میری فُرصت ہے 

وار کرنے کو جانثار آئیں

یہ تو ایثار ہے عنایت ہے 

آج کا دن بھی عیش سے گزرا

سر سے پا تک بدن سلامت ہے
Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.