Shaher Mein By Jaun Elia

 Shaher Mein By Jaun Elia 



 

رو بہ زوال ہو گئی مستیِ حال شہر میں

اب کہیں اوج پر نہیں تیرا خیال شہر میں 

یہ جو کراہتے ہوئے لوٹ رہے ہیں شہر سے

خوب دِکھا کے آئے ہیں اپنا کمال شہر میں 

 

شہرِ وفا میں ہر طرف سود و زیاں کا ہے شمار

لائیں گے اب کہاں سے ہم کوئی مثال شہر میں 

 

حالتِ گفتگو نہیں عشرتِ آرزو نہیں

کتنی اُداس آئی ہے شامِ وصال شہر میں 

 

خاک نشیں ترے تمام خانہ نشین ہو گئے

چار طرف ہے اُڑا رہی گردِ ملال شہر میں 

 

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Hai Tamana Naye Shaam By Jaun Elia