Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Umer Guzarey Gi Imtihan Mein Kia By Jaun Elia

 


Umer Guzarey Gi Imtihan Mein Kia 

عمر گزرے گی امتحان میں کیا

داغ ہی دیں گے مجھ کو دان میں کیا 

میری ہر بات بے اثر ہی رہی

نقص ہے کچھ مرے بیان میں کیا 

مجھ کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں

یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا 

اپنی محرومیاں چھپاتے ہیں

ہم غریبوں کی آن بان میں کیا 

خود کو جانا جدا زمانے سے

آگیا تھا مرے گمان میں کیا 

شام ہی سے دکان دید ہے بند

نہیں نقصان تک دکان میں کیا 

اے مرے صبح و شام دل کی شفق

تو نہاتی ہے اب بھی بان میں کیا 

بولتے کیوں نہیں مرے حق میں

آبلے پڑ گئے زبان میں کیا 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.