Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Rang Laya Hai Ajab By Jaun Elia

 Rang Laya Hai Ajab By Jaun Elia

Jaun Elia

 

رنگ لایا ہے عجب رنج خمار آخر شب

حالت آئی ہے ہم آغوش ہیں یار آخر شب 

 

حسرت رنگ بھی ہے خواہش نیرنگ بھی ہے

دیدنی فصل گماں کی ہے بہار آخر شب 

 

جونہی بوجھل ہوئیں پلکیں تو پڑی مستوں میں

اُس کی دزدیدہ نگاہوں کی پکار آخر شب 

 

صبح ہو گی مگر اس خواب سے کچھ کم ہو گی

عجب اک خواب ہے خوابوں کا دیار آخر شب 

 

جا کے دینا ہے سحر دم ترے کوچے میں حساب

کر رہے ہیں ترے رند اپنا شمار آخر شب 

 

کیا ہے بکھری ہے جو محفل کہ ہیں دل پُر محفل

رقص برپا ہے سرِ راہ گزر آخر شب 

 

ہر پلک کار گزاری میں نگہ کی ہو بسر

آخر شب ہے سو آنکھوں میں گزار آخر شب 

 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

 Tere Baghair Bhi By Jaun Elia

Top Post Ad