Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Agha Salman Baqir Poetry in Urdu

Do you know about agha Salman baqir?if no then you haven't read a good poetry of Urdu, if you like stories then you must read agha Salman's poetry, in his poetry you will get knowledge and read many stories in his poetry or you can say story + poetry if you don't believe read Urdu shayari of agha Salman baqir 

 ایک سوال


رقص کرنے کے لئے کیا حسن کا ہونا

بدن میں جام ء تمکنت ہونا

آنکھوں میں مستی کا ہونا ضروری ہے ؟

رقاصہ کے لئے کیا

مست جوانی ، تنگ کپڑوں اور ناز و نخرے کا ہونا بہت ہی ضروری ہے ؟

نہیں ۔۔۔۔ باکل نہیں

رقص کے لئے بدن اور بدن میں ترنگ ہونا ضروری ہے

بدن میں موسیقی اور تال ہونا 

اعضاء میں نشے کا ہونا ضروری ہے ،

آنکھوں میں مستی ، ہونٹوں پہ مسکراہٹ ، کمر میں لچک ، پاؤں میں تھرک ، کولہوں میں ابھار اور چھاتیوں میں مستانہ پن ہونا ضروری ہے ،

بازوؤں میں تال ، کلائیوں میں دیوانہ پن اور انگلیوں کا مہندی سے رچا ہونا ضروری ہے ،

گردن میں اٹھان ، شکم کا کمر سے لگا ہونا ضروری ہے ،

رانوں کا گداز ، پنڈلیوں میں گاؤ دم خمار ، زلفوں کا لہر دار دراز ہونا اشد ضروری ہے

رقص کے دوران مسکراتی رقاصہ کی آنکھ میں کاجل کا ڈورا ، ناک میں ہیرے کا چمکتا کوکا اور ہونٹوں پر گلنار لپ اسٹک کا ہونا بہت ضروری ہے ،

گالوں پر غازہ ، کلائی میں چوڑیاں اور تازہ پھولوں کے گجرے ہونا ، اور جھومر کا مانگ پٹی سے آراستہ ہونا ضروری ہے ،

اور لباس کا بدن کے خد و خال کو دکھانا اور بہت کچھ چھپا ہونا بہت ضروری ہے ،

رقص گاہ کا

قدر دانوں سے بھرے ہونا بھی بہت ضروری ہے

اس کے ساتھ رقاصہ کا دلربا ہونا بھی ضروری ہے

انگ انگ کا 

حالت رقص میں رقاصہ کے ساتھ ہونا ضروری ہے

دونوں کی آنکھوں میں

پیار اور ستائش کا ہونا بھی بہت ضروری ہے

میں تو اس پیمانے پہ پورا اترتا ہوں

جان لے ، رقاصہ 

 تیرا جوبن درخشاں اور انگ انگ کا عریاں ہونا ضروری ہے 


آغا سلمان باقر 

agha salman baqir poetry in Urdu Adam and eve

آدم اور حوا کی مٹی کا پیار

میں نے تجھے اپنی پسلی سے پیدا کیا

Adam aur Hawa ki mitti ka Pyar

Mainey tujhey apni pasli sey peda kiya


اسی لئے مجھے تجھ سے پیار ہے بہت 

تو میرے بدن سے بچی مہین مٹی سے بنی

Es liye majhy tujh sey Pyar hai boht

Tu mere badan sey bachi mehiyan mitti sey bani 

اس لئے میرا حق تجھ پہ پورا ہے بہت

تو میرے بدن کا ازلی و ابدی جزو لا ین فک ہے

Es liye Mera haq tujh pey pura hai boht

Tu mere badan ka azli e abdi juzu lane fiq ha

یہی وجہ ہے کہ میں تجھے دیکھ کے ، پا کے

دیوانہ و مجنون ہو جاتا ہوں

Yehi waja hai k main tujhey dhrk ka pa Kay

Dewana e majnu ho jata ho

تجھ کو تسخیر کرنا چاہتا ہوں

تجھ میں اتر کے سمٹ جانا چاہتا ہوں

Tujh ko taskhir karna chahta ho 

Tujh mein utar k simath Jana chahta ho


اصل میں بات یہ ہے کہ

تیری مٹی مجھے چپکے سے پکارتی ہے

asal mein baat yeh hai k

Teri mitti mujhy chupkey sey pukarti hai



اس کی آواز مجھے صاف سنائی دیتی ہے

میں اس کی پکار سے تیرا دیوانہ ہوۓ جاتا ہوں

Us ki awaz mujhy Saaf sunaye deti hai

Main us ki pukar sey tera dewana hue Jata ho


تیرے بدن کو اپنا بنانا چاہتا ہوں

ترے بدن میں دور تک اتر جانا چاہتا ہوں

Tere badan ko apna bana chahta ho

Tere badan mein door Tak utar Jana chahta ho


مگر تیرا بدن ، تیری مٹی

مجھ پیدا کرنے والے کو آسانی سے قبول نہیں کرتی

Magar tera badan Teri mitti

Mujh peda karney waley ko asani sey qabool nhi karti

اپنی پسند کی مٹی میں ملنا چاہتی ہے

اپنی پسند کی پسلی کو اپنی مرضی سے تلاش کرتی ہے

Apni pasand ki mitti mein milna chahti hai

Apni pasand ki pasli ko Apni marzo sey talash Karti hai


اسی کو دل دیتی ہے

اسی میں رچنا چاہتی ہے

Usi ko Dil deti hai

Usi mein rachna chahti hai

اسی کے ہاتھوں گندھنا چاہتی ہے

اسی پسلی میں وہ واپس جانا چاہتی ہے

Usi k hathoon gundhna chahti hai

Usi pasli mein woh wapis Jana chahti hai

اسی پسلی سے لپٹ کر سونا چاہتی ہے

اس مٹی کو اپنے میں سموما چاہتی ہے

Usi pasli sey lipat kar Sona chahti hai

Us mitti ko apney mein sammoona chahti hai


جب سمو جاتی ہے تو

تب ایک نئی مورت کو جنم دیتی ہے

Jab sammu jati hai toh

Tab aik nayi morat ko Janam deti hai

ہمیں یاد ہے ہم ایک مٹی سے خلق ہوۓ 

اس لئے تو ہم ایک دوسرے پہ مرتے ہیں

Humhey yaad hai hum aik mitti sey khalq hue

Es liye toh hum aik dosre pay martey hai


آغا سلمان باقر 

Agha Salman baqir

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.