Wednesday, September 15, 2021

Khwab Khwab By Jaun Elia

 Jaun Elia

Khwab Khwab By Jaun Elia 

اپنے جنوں کا پھر سروساماں ہے خواب خواب

ان راتوں ایک زلف پریشاں ہے خواب خواب 

 

پھیلی ہوئی ہے یاد کی گلیوں میں چاندنی

اک خواب اک خیال کا مہماں ہے خواب خواب 

 

راہیں مہک رہی ہیں مری لغزشوں کے ساتھ

میں خواب خواب، شہر غزالاں ہے خواب خواب 

 

دل، دشت کے سفر پہ چلا ہے دیار سے

ہنگامہِ امید بہاراں ہے خواب خواب 

 

آنکھوں میں ہیں سجی ہوئی شکووں کی خلوتیں

ہم اُس سے اور وہ ہم سے گریزاں ہے خواب خواب 

 

ہیں کھیلنے کورنگ نیا، زخمہائے دل

جاناں سے تازہ وعدہ و پیماں ہے خواب خواب 

 

دل میں کھلی ہوئی ہیں دکانیں خیال کی

تازہ حساب دست و گریباں ہے خواب خواب 

 

اک سبز سبز جھیل میں کشتی ہے سرخ سرخ

اک جسم خواب خواب ہے اک جاں ہے خواب خواب 

 

بستی میں ہے فراق کی موسم وصال کا

دشوار جو بہت ہے وہ آساں ہے خواب خواب 

No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me