Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Shayari of Aftab Hussain ~ Urdu Poetry By Aftab Hussain

Assalam  o alaikum dear friends here are some famous shayari of Aftab Hussain and these Urdu poetries are a good collection of Mr. Aftab Hussainàaaaaàaa 

Best collection of shayari In Urdu and Roman


Talash apni thi hum ko k justuju Teri thi

Muqabil ayina tha, shakal ho baho Teri  thi

 تلاش اپنی تھی ہم کو کہ جستجو تری تھی

مقابل آئنہ تھا ، شکل ہو بہو تری تھی

Khabar nhi koi uth kar kidhar ko dour para

K dashty e khwab mein awaz Chaat so Teri thi

خبر نہیں کوئی اٹھ کر کدھر کو دوڑ پڑا

کہ دشتِ خواب میں آواز چار سو تری تھی

Hum aisey log toh bus aankh ban k dhektythy 

Num e nigha tha tu bartaraf numo Teri thi

ہم ایسے لوگ تو بس آنکھ بن کے دیکھتے تھے

نمِ نگاہ تھا تُو، ہر طرف نمو تری تھی

Na janey kon Zameen per tha raqs bismil ka

Bus itna yaad raha taeg bar gulu Teri thi

نجانے کون زمیں پر تھا رقص بسمل کا

بس اتنا یاد رہا تیغ بر گلو تری تھی

Yeh baat sach Sahi qatil humharey andar tha

Magar woh chasam thi apney robaraho Teri thi


یہ بات سچ سہی ، قاتل ہمارے اندر تھا

مگر وہ چشم کہ تھی اپنے روبرو ، تری تھی

Tujhey toh yeh bhi yaad nhi baanoye Khush poush 

K kis k khoon sey xhadar laho laho Teri thi

تجھے تو یہ بھی نہیں یاد ، بانوئے خوش پوش!

کہ کس کے خون سے چادر لہُو لہُوتری تھی


آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

This one is really great Urdu poetry by Aftab

Aik shaks ko nidhal Kiya aur chal parey

aur chal parey

 اِک شخص کو نڈھال کیا اور چل پڑے

 شب ہم نے بھی کمال کیا اور چل پڑے

Pather baney hue they humhey apni rah ka

So khud ko paamal kiya aur chal parey

پتھر بنے ہوئے تھے ہمیں اپنی راہ کا

 سو ، خود کو پایمال کیا اور چل پڑے

Kiya Kiya haqeeqatey naa lipti thii Pao sey

Aik khwab ka khayal kiya aur chal parey

 کیا کیا حقیقتیں نہ لپٹتی تھیں پاؤں سے

 اِک خواب کا خیال کیا اور چل پڑے

Dhekha k raftgah k Nisha Tak kahi nhi

Kuch soch kar malal Kiya aur chal parey

 دیکھا کہ رفتگاں کے نشاں تک کہیں نہیں

 کچھ سوچ کر ملال کیا اور چل پڑے

 Aisa safar Kay seeney mein urti thi gird si

Phir saans ko bahal Kiya aur chal parey

 ایسا سفر کہ سینے میں اُڑتی تھی گرد سی

 پھر سانس کو بحال کیا اور چل پڑے

Aik hijar tha k rah ki dewar ban gaya

Us hijar sey wasal kiya aur chal parey

 اِک ہجر تھا کہ راہ کی دِیوار بن گیا

 اُس ہجر سے وصال کیا اور چل پڑے

 

آفتاب حسین 


⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱


عجیب زہر کا نشّہ ہے میرے ہونٹوں پر

 کہ جس کی لَو سے مری پتلیاں سُلگتی ہیں

 وہ آگ ہے مرے اندر عذاب کی ، جس سے

مَیں اپنی ذات میں گلزار ہوتا جاتا ہُوں

(یہ آگ وہ ہے جو سیراب کرنا جانتی ہے)

یہ کون ہاتھ تھپکتا ہے رات بھر مجھ کو؟

 یہ میرے زہر میں پانی ملا دیا کس نے؟

عجب طرح کا سکوں میرے اِضطراب میں ہے!


Ajeeb zehar ka nasha hai mere hountoon par

K jis ki looh sey Meri patliya sulagti hai

Woh aag hai mere andar azab ki jis sey

Main apni zaat mein Gulzar hota jata hoo

Yeh kon hath thapthapata hai raat Bhar mujh ko

Yeh mere zehar mein pani Mila diya kis nay

Ajeeb tarha ka sakoon hai mere idraf mein hai

آفتاب حسین 


⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

Teer es bar nishaney ki taraf sey aya

Yahni aik zakhamo na aney ki taraf sey aya

تِیر اِس بار نشانے کی طرف سے آیا

 یعنی اِک زخم نہ آنے کی طرف سے آیا

Kar e duniya nay ab uljhaya hai aisa k mujhy 

Dehan apna bhi zamaney ki taraf sey aya

کارِ دُنیا نے اب اُلجھایا ہے ایسا کہ مجھے

 دھیان اپنا بھی زمانے کی طرف سے آیا

Har gul e taza mein khushbuwe gohzishta payi

Har Naya khwab puraney ki taraf sey aya

ہر گُلِ تازہ میں خُوشبُوئے گُزشتہ پائی

 ہر نیا خواب ، پُرانے کی طرف سے آیا

Rasta dhekty rehtey thy koi aye ga koi

Aur Jisey ana tha Janey ki taraf sey aya

راستہ دیکھتے رہتے تھے کہ آئے گا کوئی

 اور جسے آنا تھا ، جانے کی طرف سے آیا

Ab toh bachney ki kio rah nhi hai k  woh shaks

Yaad kuch aur bhulaney ki taraf sey aya

اب تو بچنے کی کوئی راہ نہیں ہے کہ وہ شخص

 یاد کُچھ اور بُھلانے کی طرف سے آیا


آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

Munafiqat ka nisab parh kar muhabbatoon ki kitab likhna

Boht kathin hai khaza k maathay pay daastan e gulab likhna

منافقت کا نصاب پڑھ کر محبتوں کی کتاب لکھنا 

بہت کٹھن ہے خزاں کے ماتھے پہ داستان گلاب لکھنا 

Main jab guzru ga toh rahzaaroo mein ulfatoon Kay kawal khiley gai

Hazar Tum mere rastey mein muhabbatoon k serab likhna

میں جب چلوں گا تو ریگزاروں میں الفتوں کے کنول کھلیں گے 

ہزار تم میرے راستوں میں محبتوں کے سراب لکھنا 

Firq e mosam ki chalminu sey wasal lamhey chamak uthey gai

Udass Shamu  mein kagaz Dil per guzrey waqto k baab likhna

فراق موسم کی چلمنوں سے وصال لمحے چمک اٹھیں گے 

اداس شاموں میں کاغذ دل پہ گزرے وقتوں کے باب لکھنا 

Woh Meri khawish k loh tashna pay Zindagi k sawal ubharna

Woh es ka huruf e Karam sey apney qabooliyet k jawab likhna

وہ میری خواہش کی لوح تشنہ پہ زندگی کے سوال ابھرنا 

وہ اس کا حرف کرم سے اپنے قبولیت کے جواب لکھنا 

Gaye zamanu ki dard kijalaai bholi basri kitab parh kar

Jo ho sakey tum sey aney waley dino k rangeen khwab likhna

اب

رگئے زمانوں کی درد کجلائی بھولی بسری کتاب پڑھ  کر

جو ہو سکے تم سے آنے والے دنوں کے رنگین خواب لکھنا 


آفتاب حسین 

Aftab Hussain

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

جب سفر سے لوٹ کر آنے کی تیاری ہوئی 

بے تعلق تھی جو شے وہ بھی بہت پیاری ہوئی 

Jab safar sey loat kar aney ki tayari hui

Be taluq thi Jo Shai woh bhi boht pyari hui

چار سانسیں تھیں مگر سینے کو بوجھل کر گئیں 

دو قدم کی یہ مسافت کس قدر بھاری ہوئی 

Chaar saasain thii mager seeney ko bhujal kar gayii

Do qadam ki yeh musafat kis qadar bhari hui

ایک منظر ہے کہ آنکھوں سے سرکتا ہی نہیں 

ایک ساعت ہے کہ ساری عمر پر طاری ہوئی 

Aik  manzar hai k aankhoon sey sarakta hi nhi

Ail saaeaat hai k Sari umer per taari hui


اس طرح چالیں بدلتا ہوں بساط دہر پر 

جیت لوں گا جس طرح یہ زندگی ہاری ہوئی 

Es tarha chaalien badalta hoo basaat dabar per

Jeet loo ga jis tarha yeh Zindagi bari hui

کن طلسمی راستوں میں عمر کاٹی آفتابؔ 

جس قدر آساں لگا اتنی ہی دشواری ہوئی 

Kin talismi rastoo mein umar kaati Aftab

Jis qadar asan laga itni ho dhuswari hui

آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

راستہ خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

کوئی کیا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Rasta khwab k andar sey nikalta hua tha

Kio Kiya khwab k andar sey nikalta hua tha

وہ مہک تھی کہ مجھے نیند سی آنے لگی تھی 

پھول سا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Woh mehak thi k mujhy neend si aney lagi thi

Phool sa khwab k andar sey nikla hua tha

یہ کسی خواب کا احوال نہیں ہے کہ میں خواب 

دیکھتا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Yeh kisi khwab ka ahwal nhi hai k main khwab 

 dhekta khwab K andar sey nikalta hua tha

خواب تھے جیسے پرندوں نے پرے باندھے ہوں 

سلسلہ خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Khwab they jaisey parindo nay parey baandhey ho

Silsila khwab k andar sey nikalta hua tha


مجھ کو دنیا کے سمجھنے میں ذرا دیر لگی 

میں ذرا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Mujh ko duniya k samjhney mein Zara der lagi

Main Zara khwab k andar sey nikalta hua tha

نظر اٹھتی تھی جدھر بھی مری منظر منظر 

زاویہ خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Nazar uthi Thi jidhar bhi Meri manzar manzar

Zawiya khwab k andar sey nikalta hua tha

وہ نکلتا ہوا تھا خواب کدے سے اپنے 

خواب تھا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Woh nikalta hua tha khwab kanday sey apney 

Khwab tha khwab k andar sey nikalta hua tha

اک سرا جا کے پہنچتا تھا تری یادوں تک 

دوسرا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Aik sira ja k pohanchta tha Teri yaado Tak

Dosra khwab k andar sey nikalta hua tha

کیا بتاؤں کوئی ایمان کہاں لائے گا 

کہ خدا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Kiya batao koi emaan kaha  laye ga

k khuda khwab k andar sey nikalta hua tha


صبح جب آنکھ کھلی لوگوں کی لوگوں پہ کھلا 

جو بھی تھا خواب کے اندر سے نکلتا ہوا تھا 

Subha jab aankh khuli logo ki logo pay khula

Jo bhi tha khwab k andar sey nikalta hua tha

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

آفتاب حسین 

بس ایک بات کی اس کو خبر ضروری ہے 

کہ وہ ہمارے لیے کس قدر ضروری ہے 

Bus aik baat ki us ko Khabar zarrori hai

k woh humharey liye kis qadar zarrori ha


دلوں میں درد کی دولت بچا بچا کے رکھو 

یہ وہ متاع ہے جو عمر بھر ضروری ہے 

Dilo mein dard ki dulat bacha bacha kay rakhi

Yeh woh mitaaee hai Jo Umar Bhar zarrori ha

نہیں ضرور کہ مقدور ہو تو ساتھ رکھیں 

کبھی کبھار مگر نوحہ گر ضروری ہے 

Nhi zarror k maqdoor ho toh saath rakhien

kabhi kabar magar nohey gar zarrori ha


کبھی تو کھیل پرندے بھی ہار جاتے ہیں 

ہوا کہیں کی بھی ہو مستقر ضروری ہے 

kabhi toh khel parenday bhi haar jatey hai

hawa kahi ki bhi ho mustaqir zarrori hai

یہ کیا ضرور کہ مست اپنے آپ ہی میں رہیں 

ادھر ادھر کی بھی کچھ کچھ خبر ضروری ہے 

yeh kiya zarrori hai k mast apney app hi mein rahe

idhar udhar ki bhi kuch kuch khabar zarrori hai

مفر نہیں غم دنیا سے آفتاب حسینؔ 

بہت کٹھن ہے یہ منزل مگر ضروری ہے 

mufir nehi gham e duniya sey Aftab hussain

boht khatan hai yeh manzil mager zarrori hai

آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

وہ سر سے پاؤں تک ہے غضب سے بھرا ہوا 

میں بھی ہوں آج جوش طلب سے بھرا ہوا 

woh sar sey pao tak hai gazab sey bhara hua

main bhi ho ajj khush talab sey bhara hua

شورش مرے دماغ میں بھی کوئی کم نہیں 

یہ شہر بھی ہے شور و شغب سے بھرا ہوا 

shoorish mere demagh mein bhi kio kam nehi

yeh shehar bhi hai be shoor e shaghaf sey bhara hua

ہاں اے ہوائے ہجر ہمیں کچھ خبر نہیں 

یہ شیشۂ نشاط ہے جب سے بھرا ہوا 

haa ay hawaye bajar humhey kuch khabar nehi

yeh sheesha nashat hai jab sey bhara hua hai

ملتا ہے آدمی ہی مجھے ہر مقام پر 

اور میں ہوں آدمی کی طلب سے بھرا ہوا 

milta hai admi hi majhey har muqam per

aur main ho admi ki talab sey bhara hua

ٹکراؤ جا کے صبح کے ساغر سے آفتابؔ 

دل کا یہ جام وعدۂ شب سے بھرا ہوا 

takro ja k subha ka sagar sey Aftab

dil ka yeh jaam e wada shab sey bhara hua hai

آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

گزرتے وقت کی کوئی نشانی ساتھ رکھتا ہوں 

کہ میں ٹھہراؤ میں بھی اک روانی ساتھ رکھتا ہوں 

Guzartey waqt ki kio nishani saath rakhta ho

K main tahrao mein bhi aik rawami saath rakhta ho

سمجھ میں خود مری آتا نہیں حالات کا چکر 

مکاں رکھتا نہیں ہوں لا مکانی ساتھ رکھتا ہوں 

Samjh mein khud Meri ata nhi halat ka chakkar

Makaah rakhta nhi ho laa makaah saath rakhta ho

گزرنا ہے مجھے کتنے غبار آلود رستوں سے 

سو اپنی آنکھ میں تھوڑا سا پانی ساتھ رکھتا ہوں 

Guzarna hai majhy kitney ghubar allud rastoo sey

so apni kio aankh mein Thora SA pani saath rakhta ho


فنا ہونا اگر لکھا گیا ہے میرے ہونے میں 

تو میں تجھ کو بھی اے دنیائے فانی ساتھ رکھتا ہوں 

Fana hona ager likha gaya hai mere honey mein

toh main tujh ko bhi say duniya e fani saath rakhta ho


آفتاب حسین 

⊰᯽⊱┈──╌ ❊ ╌──┈⊰᯽⊱

Shayari of Aftab Hussain ~ Urdu Poetry By Aftab Hussain

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.