Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Tamashayi Chamam Hona By Jaun Elia

 Tamashayi Chamam Hona By Jaun Elia

Jaun Elia

 

نہ کر قبول تماشائی چمن ہونا

ہے تجھ کو نازش نسرین و نسترن ہونا 

ابھی تو زور پہ سودا ہے بت پرستی کا

خدا دکھائے برہمن کا بت شکن ہونا 

کروں میں کیا رہِ ہستی کے پیچ و خم کا گلہ

عزیز ہے تری زلفوں کا پر شکن ہونا 

کوئی صدا مرے کانوں میں اب نہیں آتی

ستم ہوا ترے نغموں کا ہم وطن ہونا 

یہ دلبری یہ بزاکت یہ کارِ شوق و طلب

مٹا گیا مجھے شیریں کا کوہکن ہونا 

ہجومِ غم میں سجائی ہے میں نے بزم خیال

نظر جھکا کے ذرا پھر تو ہم سخن ہونا 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.