Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Zindagi Loota Raha Ho By Jaun Elia

 

Jaun Elia

Zindagi Loota Raha Ho By Jaun Elia 

 

متاع زندگی لوٹا رہا ہوں 

 

میں تیرے نامہ ہائے شوق تجھ کو

بہ صد آزردگی لوٹا رہا ہوں 

 

ترا راز دلی ہے ان میں پنہاں

ترا راز دلی لوٹا رہا ہوں 

 

تری دیوانگی کی داستانیں

بہ صد دیوانگی لوٹا رہا ہوں 

 

حیات نا اُمیدی کے سہارے

بہ کرب جانکنی لوٹا رہا ہوں 

 

مجھے صحت کی تاکیدیں ہیں جن سے

وہ احکامِ شہی لوٹا رہا ہوں 

 

مجھے تو نے کبھی کیا کچھ لکھا تھا

وہی " کیا کچھ" وہی لوٹا رہا ہوں 

 

فقط اک ،، کو ہکن ،، رہناہے مجھ کو

غرور خسروی لوٹا رہا ہوں 

 

مرے شاعر، مرے معبود و مالک

یہ اعزازات بھی لوٹا رہا ہوں 

 

فقط اک کوہکن رہنا ہے مجھ کو

غرورِ خسروی لوٹا رہا ہوں 

 

یہ خط میری متاع زندگی تھے

متاع زندگی لوٹا رہا ہوں 

 

غم ترک محبت آہ یہ غم 

میں اپنی ہر خوشی لوٹا رہا ہوں 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

 Aaab O Hawa Nehi Kia By Jaun Elia

Top Post Ad