Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Es Sey pehle Guzar Jaye By Jaun Elia

 Es Sey pehle Guzar Jaye By Jaun Elia

Jaun Elia

 

آسائش امروز 

 

اِس سے پہلے کہ گزر جائیں یہ لمحات نشاط

اِس سے پہلے کہ یہ کلیاں بھی فسردہ ہو جائیں

اِس سے پہلے کہ بدل جائے مزاجِ احساس

اِس سے پہلے کہ بدل جائے نظر کا انداز

اِس سے پہلے کہ نظاروں کو نظر لگ جائے 

اِس سے پہلے کہ لباسِ شبِ خاموش ہو چاک

اِس سے پہلے کہ ستاروں کو نظر لگ جائے 

جزبہ شوق کو اِظہار پہ آمادہ کرو

لبِ خاموش کو گفتار پہ آمادہ کرو

اور اگر تم کو محبت ہی نہیں ہے مجھ سے

تو مرے بُت کدہ وہم کو ویراں کر دو

غلط انداز اداؤں کو ابھی سمجھا لو

غلط اندیش وفاؤں کو پشیماں کر دو

حُسن کا عشق نگہباں، مگر اے جانِ جہاں

وقت سے، شیوہ لمحات سے دل ہے لرزاں

کون جانے کہ سرِ شام جلیں کیسے چراغ

کس کو معلوم ، دمِ صبح جوانی ہو کہاں

چاند، یہ رات کے سینے کا دہکتا ہوا داغ

چاند، یہ کتنے ہی مایوس اندھیروں کا چراغ

اِس نے احرام کی تہذیب کو مرتے دیکھا

بے نیازانہ زمانے کو گزرتے دیکھا

سرد مہری بھی زمانے کی ہے اس کو معلوم

اِس نے تاریخ کے ہر زخم کو بھرتے دیکھا

اِس نے بابل کے طرب خیز چمن زادوں میں

رنگِ تاریخ نکھرتے ہوئے دیکھا ہو گا

یہ اجنتا و ایلورا کے سیہ خانوں پر

اُن کی شب ہائے درخشاں میں بھی چمکا ہوگا

وقت گزرا ہے، گزرتا ہے، گزر جائے گا

سازِ امروز کا ہر تار بکھر جائے گا

اے متاعِ دل و جاں! رات گزر جائے گی

وقت اِک بات ہے اور بات گزر جائے گی

حُسن اور عشق کے پابند نہیں ہیں یہ لمحات

فرصتِ شوق و عنایات گزر جائے گی

سازِ ہستی ہمہ تن سوز ہے اور کچھ بھی نہیں

ہر سحر، شامِ غم اندوز ہے اور کچھ بھی نہیں

صنعت و فلسفہ و فن و تخیّل کا مآل

شاید آسایشِ اِمروز ہے اور کچھ بھی نہیں 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

 Aaab O Hawa Nehi Kia By Jaun Elia

Top Post Ad