Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Khwab By Jaun Elia

 

Jaun Elia

Khwab By Jaun Elia 

خواب 

 

کبھی اک خواب سا دیکھا تھا میں نے

کہ تم میری ہو اور میرے لیے ہو

تمھاری دلکشی میرے لیے ہے

میں جو کچھ ہوں تمھارے ہی لیے ہوں

تمھاری ہر خوشی میرے لیے ہے 

 

وہ راتیں آہ وہ سرمست راتیں

کہ جن کی تشنہ لب سرمستیوں نے

سرورِ تشنگی بخشا تھا مجھ کو

تمھاری والہانہ بیخودی نے

غرورِ دلبری بخشا تھا مجھ کو

تمھارے جسم کی جاں پروری نے

جمالِ سرمدی بخشا تھا مجھ کو

ہماری باہمی انگڑائیوں نے

یقینِ زندگی بخشا تھا مجھ کو 

 

یقینِ جاں فضا، خوابِ تمّنا

عذابِ روح بن جائے گا اِک دن

کبھی میں نے یہ سوچا بھی نہیں تھا

یہ ہوگی خواب کی تعبیر یعنی

کہ میں نے خواب دیکھا ہی نہیں تھا

جو میری آرزو کا نقش گر ہے

کبھی وہ دور گزرا ہی نہیں تھا

وہ راتیں خواب ہو کر رہ گئیں ہیں

مگر خوابوں میں خوابوں کا تسلسل

عذابِ جاں بھی ہے جاں آفریں بھی

یہ زنجیرِ خیال و خواب و اوہام

فریبِ زندگی بھی ہے یقین بھی 

 

سُلا کر حال کی تاریکیوں میں

مجھے ماضی میں چونکاتے ہیں یہ خواب

میری پلکوں کو بوجھل دیکھتے ہی

سمٹ جاتے ہیں شرماتے ہیں یہ خواب

میں اِن خوابوں سے جب بھی رُوٹھتا ہوں

تو پہروں اَشک برساتے ہیں یہ خواب

مجھے بانہوں کے حلقے میں جکڑ کر

مرے سر کی قسم کھاتے ہیں یہ خواب

مرا آغوش اپنانے کی خاطر

زمانے بھر کو ٹھکراتے ہیں یہ خواب

شفق پر روکتے ہیں اپنا آنچل

اُفق میں جا کے چھپ جاتے ہیں یہ خواب 

 

جہاں کچھ بھی نہیں تنہا خلا ہے

نظر کا سارا سرمایہ خلا ہے 

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

 Tere Baghair Bhi By Jaun Elia

Top Post Ad