Sunday, November 21, 2021

Tere Baghair Bhi By Jaun Elia

 Tere Baghair Bhi By Jaun Elia 

Jaun Elia

تیرے بغیر بھی فطرت نے لی ہے انگڑائی

چمن میں تیرے نہ ہونے پہ بھی بہار آئی 

مرا غرورِ نظر ناروا نہیں لیکن

ہے ماروائے نظر بھی جہاں کی رعنائی 

جُدا سمجھ نہ خدا کو جہانِ فطرت سے

خدا ہے خود اِسی فطرت کی ایک خودرائی 

نیازِ غیر سے کیا کام خود نمائی کو

ہے خود ہی انجمن آرا یہ انجمن آرائی 

ہے فرق دیر و حرم میں فقط یہی کہ حیات

یہاں ہے جانِ تمّنا وہاں تمنائی 

میں کیا بتاؤں کسی بے وفا کی مجبوری

کبھی خیال جو آیا تو آنکھ بھر آئی 

ستم نگاہ کا اپنی ہمیں نہ بھولے گا

یہ کم نہیں کہ تیرے دل میں آگ بھڑکائی  

No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me