Sunday, December 5, 2021

Arsh K Tarey Tor K Lai

 Arsh K Tarey Tor K Lai 

عرش کے تارے توڑ کے لائیں کاوش لوگ ہزار کریں 

میرؔ کی بات کہاں سے پائیں آخر کو اقرار کریں 


آپ اسے حسن طلب مت سمجھیں نا کچھ اور شمار کریں 

شعر اک میرؔ فقیر کا ہم جو آپ کے گوش گزار کریں 


آج ہمارے گھر آیا لو کیا ہے جو تجھ پہ نثار کریں 

الا کھینچ بغل میں تجھ کو دیر تلک ہم پیار کریں 


کب کی ہمارے عشق کی نوبت قیس سے آگے جا پہنچی 

رسماً لوگ ابھی تک اس مرحوم کا ذکر اذکار کریں 


درج چشم میں اشک کے موتی لے جانے ہیں ان کے حضور 

چوکھا رنگ لہو کا دے کر اور انہیں شہوار کریں 


دین و دل و جاں سب سرمایہ جس میں اپنا صرف ہوا 

عشق یہ کاروبار نہیں کیا اور جو کاروبار کریں 


جتنے بھی دل ریش ہیں اس کے سب کو نامے بھیج بلا 

اس بے مہر وفا دشمن کی یادوں کا دربار کریں


ابنِ انشاء

No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me