Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Hum Miley Hi Naa They By Jaun Elia

Hum 

 

مفروضہ 

 

آرزو کے کنول کھلے ہی نہ تھے

فرض کر لو کہ ہم ملے ہی نہ تھے

کسی پہچان کی نظر سے یہاں

اصل چہرے کہاں گررتے ہیں

زندگی میں تمام چیزوں کو

ہم فقط فرض ہی تو کرتے ہیں

نئی منزل کی راہ ڈھونڈو تم

میرے غم سے پناہ ڈھونڈو تم

بھول جاؤ تمام رشتوں کو

چاک کر دو مرے نوشتوں کو

گل حسرت کھلا نہ سمجھو تم

مجھ کو اپنا صلہ نہ سمجھو تم

ہر نفس جاں کنی ہے جینے میں

اک جہنم ہے میرے سینے میں

یہ میرے کربِ ذات کے آثار

شوق تعمیر کے خرابے ہیں

ان خرابوں میں جاں کنی نے مری

خون تھوکا ہے زخم چابے ہیں

وقت کے جسم کی خراش ہوں میں

اپنے اندر سے پاش پاش ہوں میں

ذات ہے اعتبارِ ذات نہیں

اب تو میں خود بھی اپنے ساتھ نہیں 

Book Name: Shayad / شاید


Writer: Jaun Elia / جون ایلیا


Description:

This poetry is taken from the book of “Shayad / شاید” By Jaun Elia/ جون ایلیا 

About This Book

The title of this book “Shayad, شاید”

غزلیں۔ ۔ ۔ نظمیں ۔ ۔ ۔ قطعات۔

The book Shayad by Jaun Elia Pdf is a poetry work of great Urdu writer, Jaun Elia. He was a great philosopher, thinker, poet, and  Marxist writer. Jaun Elia was the brother of Syed Raees Amrohvi, a prominent writer of Urdu. He was the husband of Zahida Hina, a famous journalist, and columnist.

About Jaun Elia

Syed Hussain Jaun Asghar Naqvi, commonly known as Jaun Elia, was an Indo-Pak Urdu poet, philosopher, biographer, and scholar.he had a good command of Urdu, English, Arabic, and Persian. Meanwhile, he was an encyclopedia of knowledge about history, science, philosophy, and Islam. I hope you like the poetry book Shayad By Jaun Elia pdf and share it.


Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

Woh yaqeen hai Na gumman hai By Jaun Elia

Top Post Ad