Type Here to Get Search Results !

Search This Blog

Woh yaqeen hai Na gumman hai By Jaun Elia

Woh yaqeen hai Na gumman hai By Jaun Elia
Yaani By Jaun Elia


وہ یقیں ہے نہ گماں ہے تننا ھُو یاھُو
جانِ جانانِ جہاں ہے تننا ھُو یاھُو

کون آشوب گرِ دیر و حرم ہے آخر
جو یہاں ہے نہ وہاں ہے تننا ھُو یاھُو

کس نے دیکھا ہے مکاں اور زماں کو یارا!
نہ مکاں ہے نہ زماں ہے تننا ھُو یاھُو

میں جو اک فاسق و فاجر ہوں جو زندیقی ہوں
رمزِ ’حق‘ مجھ میں نہاں ہے تننا ھُو یاھُو

کیا بھلا سود و زیاں، سود و زیاں کیا معنی
کچھ نہ ارزاں نہ گراں ہے تننا ھُو یاھُو

سینۂ وقت قیامت کا ہے چھلنی لیکن
نہ کمیں ہے نہ کماں ہے تننا ھُو یاھُو

مفلساں! دل سے خداوند تمہارے پہ دُرود
کیا ہی روزینہ رساں ہے تننا ھُو یاھُو

یہ جو منعم ہیں انھیں کا تو ہے فتنہ سارا
اور دین ان کی دکاں ہے تننا ھُو یاھُو

یار کا ناف پیالہ تو بلا ہے یاراں
حشر محشر طلباں ہے تننا ھُو یاھُو

خون ہی تھوک رہا ہوں میں بچھڑ کے اس سے
وہی تو رنگ رساں ہے تننا ھُو یاھُو

دھول اُڑتی ہے مری جان مرے سینے میں
دل مرا دشت فشاں ہے تننا ھُو یاھُو

جونؔ، میں جو ہوں کہاں ہوں، مجھے بتلا تو سہی
جون تو مجھ میں تپاں ہے تننا ھُو یاھُو

جون ایلیا

Tags

Post a Comment

0 Comments
* Please Don't Spam Here. All the Comments are Reviewed by Admin.

Featured Post

Woh yaqeen hai Na gumman hai By Jaun Elia

Top Post Ad