Wednesday, February 9, 2022

Kaf e sufeed sar sahil tamana hai By Jaun Elia

 Kaf e sufeed sar sahil tamana hai By Jaun Elia

کفِ سفیدِ سرِ ساحلِ تمنا ہے

اور اس کے بعد سرابوں کا ایک دریا ہے



یہ آرزو کا فسوں زار جاودانہ کیا

نہ آرزو، نہ فسوں زار جاودانہ ہے


ہے کب سے پردئہ آواز کو سکوتِ ہوس

سکوت پردئہ آواز کو ترستا ہے


ہے درمیانہ ازل ہی سے ایک ترک سخن

پر اک سخن جو ازل ہی سے درمیانہ ہے


یہ خاک داں ہے بس اک روز نہ تو ہم کا

یہ روزنہ ہی توہم کا ایک توشہ ہے


نہ جانے کب سے اک آشوب ہے سوالوں کا

مگر سوال تو یہ ہے کہ مسئلہ کیا ہے


نہ پوچھ حالت جاں کاہ تندی پرواز

تکان بال و پر جاں ہی راحت افزا ہے


وہ جانِ خلوتِ ممکن ہے دل کے پہلو میں

اور ایک حشرِ مراد محال برپا ہے


ہے اس کا نافِ پیالہ غضب کہ مت پوچھو

کہ اس کی ایک جھلک اک بلا کا نشہ ہے


جون ایلیا


No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me