Wednesday, March 9, 2022

Gham mein thi Aik khushi kiya ki By Jaun Elia

Gham mein thi Aik khushi kiya ki By Jaun Elia

تو نے مستی وجود کی کیا کی 


غم میں بھی تھی جو اِک خوشی کیا کی 


ناز بردارِ دل براں اے دل 

تو نے خود اپنی دل بَری کیا کی 


آگیا مصلحت کی راہ پہ تو 

اپنی ازخود گزشتگی کیا کی 


رہروِ شامِ روشنی تو نے 

اپنے آنگن کی چاندنی کیا کی 


تیرا ہر کام اب حساب سے ہے 

بے حسابی کی زندگی کیا کی 


یُوں ہی پھرتا ہے تو جو راہوں میں 

دل محلّے کی وہ گلی کیا کی 


اِک نہ اِک بات سب میں ہوتی ہے 

وہ جو اِک بات تجھ میں تھی کیا کی 


جل اُٹھا دل ، شمالِ شام مرا 

تُو نے بھی میری دل دہی کیا کی 


نہیں معلوم ہو سکا دل نے 

اپنی اُمیِد آخری کیا کی 


جون دنیا کی چاکری کرکے 

تُو نے دل کی وہ نوکری کیا کی


جون ایلیا


No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me