Monday, May 9, 2022

zameen toh kuch bhi nehi By Jaun Elia

 zameen toh kuch bhi nehi By Jaun Elia


 


زمیں تو کچھ بھی نہیں، آسماں تو کچھ بھی نہیں


اگر گمان نہ ہو، درمیاں تو کچھ بھی نہیں



حریم جاں میں ہے اک داستاں سرا پر حال


خوش اس کا حال، مگر داستاں تو کچھ بھی نہیں


 


درونیان تسلی سے تو ملا ہے کبھی؟


عذاب حسرت بیرونیاں تو کچھ بھی نہیں


 


سہے ہیں میں نے عجب کرب سود مندی کے


گلہ ہے تجھ کو زیاں کا، زیاں تو کچھ بھی نہیں


 


کسے خبر سر منزل جو دل نے حال سہے


اذیت سفر رائیگاں تو کچھ بھی نہیں


 


نہیں ہے مجھ سا زباں داں کوئی زمانے میں


جو میرا غم ہے، وہ یہ ہے، زباں تو کچھ بھی نہیں


 


ہے جون قافلہ و راحلہ میں شور بپا


یہاں تو کچھ بھی نہیں ہے، وہاں تو کچھ بھی نہیں


 


جون ایلیا

No comments:

Post a Comment

Share your thoughts with me